جموں و کشمیر بھارت کا حصہ نہیں، اقوام متحدہ میں بھارت کو پاکستان کا کرارا جواب

 یو این پاکستان مشن کے قونصلر سعد وڑائچ نے اقوام متحدہ میں بھارت کا مکروہ چہرہ بے نقاب کردیا، بھارتی مستقل مندوب کی تقریر پر دنیا کے سامنے کرارا جواب دے دیا۔

پاکستانی قونصلرسعد وڑائچ نے اپنا مؤقف بیان کرتے ہوئے کہا کہ ریکارڈ کی درستگی کیلئے یہ بتانا ضروری ہے کہ جموں و کشمیر بھارت کا حصہ نہیں ہے۔

بھارتی مندوب کو اس بات کا علم ہوگا کہ اسی ایوان میں نہتے اور مظلوم کشمیریوں کیلئے قرارداد منظور کی گئی تھی، بھارت دھوکے سے کشمیریوں کو حق خوداردیت سے محروم نہیں کرسکتا۔

سعد وڑائچ کا مزید کہنا تھا کہ بھارت کشمیر پر ظالمانہ قبضہ کرکے بھی مظلوم کشمیریوں کی غیر مسلح جدوجہد آزادی کو تمام تر ریاستی مظالم کے باوجود آج تک نہیں دبا سکا۔

اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی سے خطاب کرتے ہوئے پاکستانی مندوب منیراکرم نے کہا کہ عالمی تناؤ اور تنازعات بہت بڑھ چکے ہیں اس لیے کشمیر سمیت عالمی تنازعات کے حل کی طرف بہت کم پیشرفت ہوئی۔

اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل نے گزشتہ سال صرف دو مرتبہ مسئلہ کشمیر پر غور کیا جبکہ کشمیر سیکیورٹی کونسل ایجنڈے پر سب سے پرانا اور حل طلب مسئلہ ہے۔

پاکستانی مندوب منیراکرم نے کہا کہ پاکستان مسئلہ کشمیر کا یو این قراردادوں کے مطابق منصفانہ حل چاہتا ہے، یو این سیکریٹری جنرل نے ایل اوسی سیز فائرمعاہدے پر عملدرآمد کو سراہا ہے۔

منیراکرم کا کہنا تھا کہ بھارت کا5اگست2019 کا اقدام سلامتی کونسل کی قراردادوں کے خلاف ہے، بھارت تعمیری مذاکرات کیلئے درکار ماحول ممکن بنانے کیلئے اقدامات کرے۔

انہوں نے مطالبہ کیا کہ بھارت 5اگست کو کشمیریوں کی مرضی کیخلاف کیا گیا یکطرفہ اقدام فوری طور پر واپس لے، سلامتی کونسل کی قراردادوں سے ہی تنازع کشمیر حل کیا جاسکتا ہے۔

پاکستانی مندوب منیراکرم نے کہا کہ بدقسمتی سے بھارت مقبوضہ علاقوں میں جبر کی پالیسی پر قائم ہے، کشمیر میں انسانی حقوق کی پامالی، پاک بھارت کشیدگی سے عالمی امن کو خطرہ لاحق رہے گا۔

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here