وفاقی حکومت نے ذخیرہ اندوزوں کے خلاف گھیرا تنگ کرتے ہوئے سخت سزاؤں پر مشتمل آرڈیننس لانے کی تیاری کر لی۔

ذخیرہ اندوزوں کے خلاف سزاؤں کے حوالے سے مجوزہ آرڈیننس منظوری کےلیے کابینہ ممبران کو ارسال کر دیا گیا ہے۔

منظوری کے بعد مجوزہ آرڈیننس صدر مملکت ڈاکٹر عارف علوی کو دستخط کے لئے بھجوایا جائے گا اور صدر پاکستان کی منظوری کے بعد مجوزہ آرڈیننس کا اجرا کیا جائے گا۔

آرڈیننس کا اطلاق وفاقی دارالحکومت اسلام آباد کی حدود میں ہوگا، ذخیرہ اندوزی پر 3 سال قید، ضبط شدہ مال کی مالیت کا 50 فیصد جرمانہ ہوگا۔

واضح رہے کہ وزیراعظم عمران خان متعدد بار ذخیرہ اندوزوں کو تنبیہ کرتے ہوئے واضح کر چکے ہیں کہ ذخیرہ کرکے مصنوعی قلت پیدا کرنے والوں کے خلاف سختی سے نمٹا جائے گا اور انہیں کسی صورت رعایت نہیں دی جائے گی۔

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here