کراچی میں 363 منشیات کے اڈے پولیس کی سرپرستی میں چلائے جانے کاانکشاف

کراچی میں 363 منشیات کے اڈے پولیس کی سرپرستی میں چلائے جانے کا انکشاف

 شہر قائد میں 363 منشیات کے اڈے پولیس کی سرپرستی میں چلائے جانے کا انکشاف سامنے آیا ، جس کے بعد اسپیشل برانچ پولیس نے محکمے کی کالی بھیڑوں کی فہرست آئی جی سندھ کو ارسال کردی ہے۔

کراچی میں پولیس اہلکار اور افسران منشیات فروش بن گئے ، کراچی میں 363 منشیات کے اڈے پولیس سرپرستی میں چلائے جانے کے انکشاف کے بعد اسپیشل برانچ پولیس نے محکمے کی کالی بھیڑوں کی فہرست آئی سندھ کو ارسال کردی، فہرست میں ڈی ایس پیز اور ایس ایچ اوز کے نام شامل ہیں۔

رپورٹ میں بتایا گیا ہے کہ منشیات کے دھندے میں 100 سے زائد افسران و اہلکاروں ملوث ہیں، افسران اور اہلکار آنکھیں بند کرنے کے عوض بھاری رقم لیا کرتے تھے، ہیروئن، افیون، آئس سب پولیس کی سرپرستی میں فروخت کیا جاتا ہے۔

اسپیشل برانچ کی رپورٹ میں کہا گیا کہ منشیات فروشی کا پولیس کو بھتہ دیا جاتا تھا، سٹی میں 42، کورنگی میں 15 اڈوں ، ایسٹ میں 20، ملیر میں 4 ،سینٹرل میں 169 اڈوں سے بھتہ لیا جاتا ہے جبکہ جنوبی میں 28، ویسٹ میں منشیات کے 87 اڈے چلوانے کیلئے بھتہ لیا جاتا ہے۔

رپورٹ میں 100 سے زائد افسران، اہلکاروں کی نشاندہی کی گئی ہے ، جس کے بعد ملیر میں منشیات فروشوں کی سرپرستی کرنے والوں کے خلاف ایکشن لیتے ہوئے 2 اےایس آئی، ایک ہیڈ کانسٹیبل سمیت 8 اہلکاروں کو معطل کر دیا گیا ہے۔

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here