اپوزیشن جتنے مرضی جلسے کرے، قانون توڑا تو یہ سب جیل میں ہوں گے، وزیراعظم

0
19

وزیراعظم عمران خان نے کہا ہے کہ اپوزیشن والے جتنے مرضی جلسے کرنا ہے کریں، جہاں قانون توڑا تو اب یہ وی آئی پی نہیں بلکہ عام جیل میں جائیں گے۔

انصاف لائرز فورم کے زیر اہتمام منعقدہ سیمینار سے خطاب میں وزیراعظم نے کہا کہ انہوں نے الیکشن سے قبل ریاست مدینہ کی بات نہیں کی تاکہ لوگ یہ نہ کہیں کہ ووٹ حاصل کرنے کیلئے یہ نعرہ لگارہا ہوں۔

انہوں نے کہا کہ ریاست مدینہ میں کوئی قانون سے اوپرنہیں تھا، مدینہ کی ریاست کی بنیاد قانون کی بالادستی تھی۔

وزیراعظم نے کہا کہ جتنے مرضی جلسے کرنا ہے کرلیں اگر قانون توڑا تو سیدھا جیل جائیں گے یہ لوگ اب وی آئی پی نہیں بلکہ عام قیدیوں والی جیل جائیں گے، اربوں کی چوری کرنیوالے کہتے ہیں ہمیں معاف کرو، جس دن ان کو این آر او ملا یہ پاکستان کی تباہی ہوگی ملک نیچے جائے گا ان کو این آراو دینا ہے تو غریب لوگوں کا کیا قصور ہے۔

عمران خان نے نواز شریف کی بیماری سے متعلق کہا کہ کابینہ کی 6 گھنٹے کی میٹنگ میں ڈاکٹرز نے بتایا کہ نواز شریف کو اتنی بیماریاں ہوگئيں، نواز شریف کی بیماریوں کا سن کر شیریں مزاری کی آنکھوں میں آنسو آگئے، اگر شیریں مزاری کی آنکھوں میں آنسو آگئے تو سمجھ جائيں ہمیں کیسی کیسی بیماریاں بتائی ہوں گی تو ڈر لگا کہ یہ جہاز کی سیڑھیاں بھی چڑھ سکے گا بھی یا نہیں ۔

انہوں نے کہا کہ لندن میں بیٹھا شخص لوگوں سے کہہ رہا ہے کہ وہ اس کی چوری بچانے کے لیے باہر نکلیں، عوام چوری بچانے کے لیے نہیں نکلتے، چاہے یہ پیسے بانٹیں یا قیمے کے نان کھلائیں لوگ باہر نہیں نکلیں گے۔

اسلام آباد میں سیمینار سے خطاب کرتے ہوئے وزیراعظم نے کہا کہ نوازشریف فوج کو پنجاب پولیس بنانا چاہتے تھے، اسی لیے ان کی ہر آرمی چیف سے لڑائی ہوئی۔ سپریم کورٹ نے کہا تمام ادارے مفلوج کردیےگئے ہیں،جن کا کام چیک اینڈ بیلنس کرنا ہے وہ سب ادارے اپنے کنٹرول میں کرلیتے ہیں۔

وزیراعظم نے کہا کہ دہشتگردی کیخلاف پاک فوج نے جنگ کی آج ہم محفوظ ہیں، پاک فوج کی قربانیوں کی بدولت ہی دہشتگردی کا خاتمہ ہوا پاک فوج ہر مشکل وقت میں حکومت کا ساتھ دے رہی ہے، کراچی میں ریکارڈ بارشیں ہوئی ، کراچی فوج کی وجہ سے بچ گیا

ان کا کہنا تھا کہ آئی ایس آئی کو کنٹرول کرنے کی کوشش میں ان سے لڑائی ہوتی ہے، نوازشریف نے کہا تھا ظہیر الاسلام نے مجھے کہا استعفیٰ دو

انہوں نے کہا کہ ظہیرالاسلام کو پتا تھا کہ نوازشریف نے کتنی چوری کی ہے اسی لیے نواز شریف نے ڈی جی آئی ایس آئی کی استعفیٰ مانگنے والی بات خاموشی سے سنی۔

ظہیرالاسلام نے اس لئے کہا کہ انھیں پتہ تھا نوازشریف نے کتنا پیسہ چوری کیا، مجھے فوج سے کوئی مسئلہ کیوں نہیں ہے کیونکہ اگر میں پیسہ بنا کر باہر بھیجوں گا تو سب سے پہلے آئی ایس آئی کو پتہ چلے گا آئی ایس آئی ٹاپ ایجنسی ہے دنیا اسے مانتی ہے۔

وزیراعظم عمران خان نے کہا پاک فوج کے خلاف غلط زبان استعمال کرنے والے ہندوستان کا ایجنڈا لے کر پھر رہے ہیں، ان کا مسئلہ جمہوریت نہیں۔

وزیر اعظم عمران خان نے بتایا کہ وفاقی کابینہ میں نواز شریف کی اتنی بیماریاں بتائی گئی تھیں کہ شیریں مزاری تک کی آنکھ میں آنسو آگئے ، مگر اتنی بیماریوں والے کو جیسے ہی لندن کی ہوا لگی اندر سے کوئی اور نوازشریف نکل آیا۔

انہوں نے کہا کہ ان کے ترجمان اور ہمارے وزیر کے بھائی نے نواز شریف کو خمینی سے ملا دیا، کہاں آیت اللہ خمینی اور کہاں ہمارا نہاری کھانے والا، خمینی کی بیٹی کے لندن میں چار فلیٹ نہیں نکلتے، خمینی دہی روٹی کھاتا تھا اس کے لیے ہیلی کاپٹر میں نہاریاں نہیں آتی تھیں۔

وزیر اعظم نے کہا کہ انہوں نے پوری کوشش کی کہ کسی طرح انہیں این آر او مل جائے، جس دن انہیں این آر او ملا پاکستان کی تباہی ہوگی۔

وزیر اعظم عمران خان نے نام لیے بغیر مسلم لیگ ن کے رہنما طلال چوہدری پر طنز کیا اور کہا کہ ان کا ایک سینیئر عہدے دار صبح کے تین بجے کسی خاتون کے گھر تنظیم سازی کرنے چلا گیا۔

عمران خان نے کہا کہ وہ رہنما بڑا حیران ہوا کہ خاتون کے بھائیوں نے اسے کیوں مارا ۔

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here