کشمیری نوجوانوں کے قتل کی بین الاقوامی تحقیقات کی جائیں، پاکستان کا مطالبہ

پاکستان نے 3 مزید کشمیریوں کے ماورائے عدالت قتل پر بین الاقوامی تحقیقات کا مطالبہ کردیا اس حوالے سے ترجمان دفترخارجہ نے اپنے ایک جاری بیان میں مزید 3 کشمیریوں کی جعلی مقابلوں میں شہادت کی مذمت کی ہے۔

ترجمان دفتر خارجہ زاہد حفیظ نے کہا کہ بھارتی افواج نے وادی میں ظلم و ستم کا بازار گرم کر رکھا ہے ، مقبوضہ کشمیرمیں ماورائے عدالت قتل کیے جانے والے 3 کشمیریوں کے قتل عام کی تحقیقات کا مطالبہ کرتے ہیں۔

ترجمان نے بتایا کہ جعلی مقابلوں میں شہادت پانے والوں میں سرینگر کے ہائی اسکول کا نہتا اور بے گناہ طالب علم بھی شامل ہے، پاکستان کشمیریوں کے ماورائے عدالت قتل عام کی شدید الفاظ میں مذمت کرتے ہوئے عالمی تحقیقات اور ایسے ہولناک جرائم کرنے والوں کو انصاف کے کٹہرے میں لانے کا مطالبہ کرتا ہے۔

ترجمان دفتر خارجہ کے مطابق سال 2020 میں قابض بھارتی افواج نے 300 سےزائد کشمیریوں کو شہید کیا، نہتے کشمیریوں کو جعلی مقابلوں اور آپریشنز میں شہید کیا گیا، رواں برس شہید ہونے والوں میں کشمیریوں میں عورتیں اور معصوم بچے بھی شامل ہیں۔

زاہد حفیظ چوہدری کے بیان کے مطابق رواں برس بھارتی فوج کے مظالم سے 750 کشمیری زخمی ہوئے، سال 2020 میں 2770 کشمیریوں کو گرفتار اور رواں برس کشمیریوں کو اجتماعی سزا کے طور پر 922 گھروں کو تباہ کیا گیا۔

،ترجمان دفتر خارجہ کا کہنا ہے کہ شوپیاں میں بھی جعلی مقابلے میں بے گناہ کشمیری نوجوانوں کو شہید کیا گیا، جعلی مقابلے کے بعد اسلحہ رکھنے کے انکشافات انسانیت کے ساتھ سنگین مذاق ہے، کشمیریوں کو شہید کرکے ان کےساتھ اسلحہ رکھ کر مسلح تصادم کا رنگ دیا گیا۔

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here