کالا باغ ڈیم، فوائد اور اعتراضات  آخری حصہ

0
1540

کالا باغ ڈیم، فوائد اور اعتراضات  آخری حصہ  کالاباغ ڈیم نہ بنانے کے نقصانات کا احاطہ کرنا ایک مضمون میں ممکن نہیں۔ البتہ چند موٹے موٹے نقاط گنواتا ہوں۔ 

۔ 1۔ کالاباغ ڈیم پر جنرل ضیاء کے بعد کام بند کر دیا گیا۔ اصولاً یہ ڈیم 1993ء میں آپریشنل ہوجانا چاہئے تھا۔ یوں اس ڈیم پر 25 سال سے کام نہیں ہوا۔

کالاباغ ڈیم سے اضافی 50 لاکھ ایکڑ بنجر زمین سیراب ہونی تھی۔
نہری زمین کے پیش نظر فی ایکڑ 3 لاکھ روپے سالانہ پیداوار لگائیں تو اب تک ہم اپنا 37500 ارب روپے یا 375 کھرب روپے یا 375 ارب ڈالر کا نقصان صرف پیدوار کی مد میں کروا چکے ہیں۔

۔ 375 ارب ڈالر کتنے ہوتے ہیں؟
پاکستان کا کل بیرونی قرضہ تقریباً 84 ارب ڈالر ہے۔ بس اسی سے اندازہ لگا لیجیے۔

کالا باغ ڈیم، فوائد اور اعتراضات حصہ اؤل

کالا باغ ڈیم، ایک قدرتی تحفہ

کالا باغ ڈیم، فوائد اور اعتراضات حصہ دوم

۔ 2۔ صنعتی پیداور کی لاگت کا تعئن دو چیزیں کرتی ہیں۔
پہلی لیبر اور دوسری بجلی۔
پاکستان میں لیبر بہت سستا ہے لیکن بجلی یا تو ناپید ہے یا اتنی مہنگی ہے کہ اس بجلی سے پیدا ہونے والی اشیاء کی لاگت دگنی ہو جاتی ہے۔
اس کی وجہ سے پاکستانی اشیاء بیرون ملک منڈیوں میں دوسرے ممالک کی اشیاء کا مقابلہ نہیں کر پاتیں بلکہ اب تو اپنے ملک کے اندر بھی دوسرے ممالک کی اشیاء سے مقابلہ نہیں کر پا رہیں۔

یہی وجہ ہے کہ نواز شریف کے موجودہ پانچ سالوں میں پاکستان میں سب سے زیادہ انڈسٹریاں بند ہوئیں اور میڈیا پر آپ نے خبریں سنی ہونگی کہ بہت سے لوگوں نے اپنے کارخانے بنگلہ دیش منتقل کر دیئے۔

انڈسٹریاں بند ہونے سے لاکھوں لوگ بے روزگار ہوئے،
پاکستان کی برآمدات کم اور درآمدات بڑھیں یوں تجاری خسارہ ریکارڈ سطح پر پہنچ گیا،
یہ تجارتی خسارہ دور کرنے کے لیے بھاری سود پر بے پناہ قرضے لیے گئے،
قرضے لینے کے لیے ورلڈ بینک اور آئی ایم ایف کی ایسی شرائط مانی گئیں جس نے پاکستان کی سلامتی کو خطرے میں ڈال دیا،
اشیاء کی قیمتیں بڑھیں جس کی وجہ سے لوگوں کی قوت خرید کم ہوئی،
بے روزگاری اور مہنگائی نے بہت سے سماجی مسائل کو بھی جنم دیا،
بیرونی سرمایہ کاری نہ ہونے کے برابر رہ گئی،

ان نقصانات کو کیلکولیٹ نہیں کیا جا سکتا۔ تاہم پاکستان کو تقریباً کھوکھلا کر کے معاشی دیوالیہ پن کی حدوں پر پہنچا دیا گیا ہے۔

۔ 3۔ جن دنوں کالاباغ ڈیم کو بند کیا گیا ان ہی دنوں متبادل کے طور پر بے نظیر بھٹو نے پاکستان میں بڑے پیمانے پر تیل سے بجلی بنانے والے مہنگے تھرمل بجلی گھروں کو لانچ کیا جو زیادہ تر پرائیویٹ ہوتے ہیں۔

یہ تھرمل بجلی گھر نہایت مہنگے ہیں۔

نواز شریف نے اپنے حالیہ پانچ سالوں میں بجلی کے تمام متبادل منصوبے بند کروائے اور دبا کر میان منشاء سے تھرمل بجلی خریدی جس کے صرف تیل کا قرضہ پانچ سالوں میں 1000 ارب روپے یا 10 ارب ڈالر سے تجاوز کر چکا ہے۔ یعنی سالانہ 2 ارب ڈالر۔

تقریباً اسی تناسب سے ہم 25 سال سے بے نظیر کے اس تحفے کی قیمت چکا رہے ہیں۔ اگر کالا باغ ڈیم بنتا تو ہمیں تھرمل بجلی کا خرچہ تقریباً نصف پڑتا۔
اس ضمن میں ہم نے سیدھا سیدھا کم و بیش 25 کھرب روپے یا 25 ارب ڈالر کا نقصان کیا ہے۔

۔ 4۔ سیلاب پاکستان میں تقریباً ہر سال آکر اربوں ڈالرز کا نقصان کر دیتے ہیں۔ اگر کالاباغ ڈیم بنا ہوتا تو ہم وہ سارا پانی ذخیرہ کرلیتے اور سیلابوں سے بچے رہتے۔
اس کا اندازہ نہیں کہ ان 25 سالوں میں سیلابوں سے ہم کتنا نقصان کروا چکے ہیں۔

کالا باغ ڈیم، فوائد اور اعتراضات حصہ اؤل

کالا باغ ڈیم، ایک قدرتی تحفہ

کالا باغ ڈیم، فوائد اور اعتراضات حصہ دوم

۔ 5۔ انڈیا نے چند دن پہلے پاکستان کے خلاف کشن گنگا کیس جیتا ہے جس میں انڈیا کی یہ دلیل تسلیم کی گئی کہ ” پاکستان میں ڈیم نہیں ہیں اور پانی سمندر میں ضائع کر رہا ہے “

اس دلیل کی بنیاد پر انڈیا نے ہمارے پانیوں پر اب تک چھوٹے بڑے پچاس ڈیم بنا لیے ہیں اور مزید پر کام جاری ہے۔

انڈیا کے ان ڈیموں کے اثرات اب نظر آرہے ہیں اور ملک بھر میں خشک سالی نے تیزی سے اپنے پنجے گاڑنے شروع کر دئیے ہیں۔ پاکستان کے کئی دریا سوکھ چکے ہیں اور ان دریاوؤں پر اباد زمینیں تیزی سے بنجر ہو رہی ہیں۔

اگر ہمارے پاس کالاباغ جیسا بڑا ڈیم ہوتا تو انڈیا کبھی ہمارے پانیوں پر ڈیم نہ بنا پاتا۔ ہمارے پاس اس کو روکنے کا عالمی جواز ہوتا۔

اب انڈیا ایک قدم مزید آگے جا رہا ہے اور پاکستان آنے والے دریاؤوں کا رخ مکمل طور پر موڑنا چاہتا ہے۔ اگر ایسا ہوا تو پاکستان کو اپنی تاریخ کے پہلے اور بدترین قحط کا سامنا کرنا پڑے گا۔

ٹیوب ویلوں کا پانی صرف دو تین سال تک ساتھ دے گا جس کے بعد وہ اتنا نیچے چلا جائیگا کہ اس کو نکالنا ممکن نہیں رہے گا۔

جو لوگ کہتے ہیں کہ ڈیم بنانے سے صوبائی ہم آہنگی کو خطرہ ہے۔ ان کا اس وقت کے بارے میں کیا خیال ہے جب پانی کی نایابی کی وجہ سے تمام صوبے بھوک اور پیاس کی حالت میں ایک دوسرے کو کھانے پر آمادہ ہو جائنگے؟

پاکستان جسے دنیا میں کوئی شکست نہیں دے سکا پیاس سے مر جائیگا!

یہ ایک سادہ اور مختصر سا تجزیہ ہے کالاباغ ڈیم نہ بنانے کے نقصانات پر۔

سنا ہے کہ اے این پی اور کچھ سندھی قوم پرستوں کو ڈیم نہ بنوانے کے سالانہ کئی ارب روپے انڈیا دیتا ہے۔

چند ارب روپوں کے لیے پاکستان کا کھربوں روپے کا نقصان اور معاشی طور پر برباد کر کے رکھ دیا ان ظالموں نے۔ ان ہی کے لیے وہ مثال ہے کہ ” اپنی ایک بوٹی کے لیے دوسروں کی گائے ذبح کروا دی”

ان کی ذہنی پسماندگی کی حالت یہ ہے کہ ایک مشہور مولانا کا ڈیم کے خلاف بیان سنا۔ فرما رہا تھا کہ ” مجھے یہ تو نہیں پتہ کہ کالاباغ ڈیم کے کیا نقصانات ہیں، ہم نے تو اے این پی کو دیکھ دیکھ کر مخالفت شروع کی تھی، البتہ یہ کہوں گا کہ دو ڈیم پہلے ہی بنے ہیں اگر تیسرا بھی بن گیا تو ہم بیچ میں مینڈک کی طرح ٹر ٹر کرینگے” ۔۔۔۔۔۔۔

پوری دنیا میں پانی کو زندگی سمجھا جاتا ہے، پاکستانی کی سیاسی بدمعاشیہ دنیا کی واحد مخلوق ہے جو پانی کو موت سمجھاتی رہی اور ہم پر پانی کے تمام راستے بند دئیے۔

کالا باغ ڈیم، فوائد اور اعتراضات حصہ اؤل

کالا باغ ڈیم، ایک قدرتی تحفہ

کالا باغ ڈیم، فوائد اور اعتراضات حصہ دوم

آخر میں ایک سادہ سی التجاء ۔۔۔

میں پشتون ہوں، ہمارے آپس میں پانیوں پر جتنے بھی اختلافات ہوں لیکن کم از کم ایک دوسرے کو پیاسے نہیں مرنے دینگے، البتہ انڈیا ہمیں پیاسا مار دے گا، خدا کے لیے اس سے پانی چھین لو باقی بے شک آپس میں اس پر لڑتے رہو۔

اور چھیننے کے لیے ڈیم بنانے کے سوا کوئی چارہ نہیں!

تحریر شاہدخان

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here