ایران کا اقوام متحدہ کو جوہری تنصیبات تک رسائی دینے سے انکار

ایرانی حکام نے اقوام متحدہ کے معائنہ کاروں کو ایٹمی پلانٹس سے متعلق معلومات اور تصاویر تک رسائی دینے سے انکار کردیا۔

اقوام متحدہ کی جوہری ایجنسی اور ایران کے مابین کچھ ماہ قبل معاہدہ ہوا تھا، جس کے بعد ایران سے اقوام متحدہ کے معائنہ کاروں کو جوہری پلانٹس کے ڈیٹا تک رسائی دینی تھی۔

تاہم ایرانی پارلیمنٹ کے اسپیکر محمد باقر باغ نے انٹرنیشنل اٹامک انرجی ایجنسی کے معائنہ کاروں کو ایٹمی پلانٹس سے متعلق معلومات، ڈیٹا اور تصاویر تک رسائی دینے سے انکار کرتے کردیا ہے۔

ان کا کہنا تھا کہ جوہری تنصیبات سے متعلق تمام ڈیٹا ہمارے پاس محفوظ ہے اور یہ اس وقت اقوام متحدہ کے معائنہ کاروں کے حوالے نہیں کریں گے جب تک از سر نو معاہدہ نہیں ہوجاتا۔

جوہری توانائی کے پُرامن استعمال کے فروغ کے لیے کوشاں عالمی تنظیم انٹرنیشنل اٹامک انرجی ایجنسی اور ایران کے مابین فروری میں تین ماہ کا نگرانی کا معاہدہ طے ہوا تھا جو 24 مئی کو ختم ہوگیا تھا تاہم معاہدے میں ایک ماہ کی توسیع کی گئی تھی جو ختم ہوچکی ہے۔

مبصرین کا کہنا ہے کہ ایران کی جانب سے ایجنسی کے ساتھ تعاون نہ کرنے کے اعلان سے 2015 کے 6 ممالک کے ساتھ کیے گئے عالمی جوہری معاہدے سے امریکا کی علیحدگی پر ہونے والے مذاکرات کھٹائی میں پڑ سکتے ہیں۔

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here