کسان مودی سرکار کیخلاف سراپا احتجاج، ملک بند کرنے کی کال دے دی

0
50

بھارت میں کسان تنظیموں نے ذرعی قوانین کے خلاف بطور احتجاج آج ملک گیر ہڑتال کی کال دی ہے۔ حزب اختلاف کی بیشتر جماعتوں نے اس کی حمایت کی ہے جس سے مختلف ریاستوں میں عام زندگی بری طرح متاثر ہوئی ہے۔

مودی کی پالیسیوں کیخلاف کسانوں کا احتجاج جاری ہے، مشتعل کسانوں نے بھارت کو بند کرنے کی کال دے دی، اپوزیشن کی چوبیس جماعتیں بھی کسانوں کے ساتھ ہیں، بی جے پی حکومت نے دہلی کے وزیراعلیٰ اروند کیجریوال کو گھرمیں نظر بند کردیا۔

مودی سرکار کے نئے زرعی قوانین نامنظور کرتے ہوئے کسانوں نے بھارت کو بند کردیا، ٹرانسپورٹ اور دکانیں بند جبکہ ٹرین سروس معطل کرکے طلباء طالبات کے امتحانات ملتوی کرا دیئے گئے۔

کسانوں کی کال پر آج بھی پورے بھارت میں احتجاج کیا گیا۔ مودی سرکار تیرہ روز سے کسانوں کو منانے میں ناکام رہی، کسانوں کا احتجاج نئی دہلی سے سارے ملک میں پھیل گیا۔

اپوزیشن جماعتیں بھی کسانوں کے ساتھ کھڑی ہوگئیں، دو بڑی جماعتیں کانگریس اور عام آدمی پارٹی بھی کسانوں کے احتجاج میں شامل ہوگئی، انا ہزارے کی تنظیم نے کسانوں کیلئے ایک دن کی بھوک ہڑتال کا آغاز کردیا۔

دوسری جانب مودی سرکار کسانوں کو روکنے کیلئے اوچھے ہتھکنڈوں پر اتر آئی، وزیراعلی اروند کیجریوال کو گھر میں نظر بند کردیا گیا، نئی دہلی میں دفعہ ایک سو چوالیس نافذ کردی گئی اور مختلف شہروں میں پولیس کی اضافی نفری بھی تعینات کردی گئی ہے۔

کسان رہنماؤں کا کہنا ہے کہ حکومتی قوانین کسانوں کے خلاف ہیں جبکہ یہ صنعت کاروں اور کمپنیوں کے مفاد میں ہیں، اس کے علاوہ طلبا اور بینک یونینز نے بھی کسانوں کی حمایت کا اعلان کردیا۔

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here