اسرائیل کی خفیہ ایجنسی موساد کے درجنوں افراد گرفتار

اسرائیل نے ایرانی جوہری سائنسدان کو کیسے قتل کیا؟ نئی رپورٹ میں بڑے انکشافات

 ایرانی انٹیلیجنس نے بہت بڑا کارنامہ انجام دیتے ہوئے دہشت گرد ریاست اسرائیل کی خفیہ ایجنسی موساد کے درجنوں افراد کو گرفتار کرلیا ہے۔

ایران کی وزارت انٹیلیجنس نے اسرائیل کی خفیہ ایجنسی موساد پر کاری ضرب وارد کرتے ہوئے موساد کے کئی ایجنٹوں اور جاسوسوں کو گرفتار کرلیا ہے۔

ایران کی وزارت انٹلیجنس کے انسداد جاسوسی کے ڈائریکٹر جنرل نے اعلان کیا ہے کہ اسلامی جمہوریہ ایران کی انٹیلیجنس نے اسرائیل کی خفیہ ایجنسی موساد پر کاری ضرب وارد کرتے ہوئے موساد کے کئی ایجنٹوں اور جاسوسوں کو گرفتار کرلیا ہے۔

Twitter

انہوں نے کہا کہ ایران کے گمنام سپاہیوں نے اندرون ملک اور بیرون ملک وسیع اقدامات اور  اطلاعات کی بنیاد پر اسرائیل کی خفیہ ایجنسی موساد پر کاری ضرب وارد کی ہے اور موساد سے منسلک اور وابستہ کئی ایجنٹوں اور جاسوسوں کو گرفتار کرلیا ہے۔

انہوں نے کہا کہ اسرائیلی ایجنٹوں کو مغربی سرحد سے بھاری اسلحہ کے ساتھ ایران میں داخل ہوتے ہوئے گرفتار کیا گيا ہے۔

ایرانی وزارت انٹیلی جنس  کے انسداد جاسوسی کے ڈائریکٹر نے کہا کہ اسرائيل کی خفیہ ایجنسی کے ایجنٹ ایران میں بڑے پیمانے پر تخریبی کارروائی کرنا چاہتے تھے لیکن ایران کے گمنام سپاہیوں نے انہیں بروقت گرفتار کرکے ان کے مذموم منصوبے کو ناکام بنادیا اور اسرائیل کی خفیہ ایجنسی موساد پر کاری ضرب لگایا۔

ایرانی وزارت انٹیلی جنس  کے انسداد جاسوسی کے ڈائریکٹر نے ایران کے مغربی صوبوں کے عوام کی ہوشیاری پر شکریہ بھی ادا کیا۔

 گزشتہ برس نومبر میں ایران کے جوہری سائنسدان محسن فخری زادہ کے قتل میں اسرائیل کی خفیہ ایجنسی موساد ملوث تھی۔

جیوئش کرونیکل کی رپورٹ میں بتایا گیا ہے کہ موساد کے ایجنٹوں نے مختلف ٹکڑوں میں اسمگل کی گئی ون ٹون گن کے ذریعے محسن فخر ی زادہ کو قتل کیا۔

انٹیلی جنس ذرائع کے حوالے سے رپورٹ میں بتایا گیا ہے کہ اسرائیلی اور ایرانی شہریوں پر مشتمل موساد کے تقریباً 20 ایجنٹوں نے تقریباً 8 ماہ نگرانی کے بعد حملہ کرکے مذکورہ ایرانی جوہری سائنسدان کو قتل کیا۔

الجزیرہ کا کہنا ہے کہ لندن کے اخبار میں بدھ کو شائع ہونے والی اس رپورٹ کی فوری طور پر تصدیق نہیں ہو سکی۔

تاہم پیر کو ایران کے وزیربرائے انٹیلی جنس نے سرکاری ٹی وی سے گفتگو کرتے ہوئے کہا تھا کہ ایران کی مسلح افواج کا ایک ملازم اس قتل میں ملوث تھا۔

ایرانی میڈیا کے مطابق فخری زادہ 27 نومبر کو اس حملے کے بعد اسپتال میں دوران علاج انتقال کر گئے تھے۔ اس حملے کے کچھ ہی دیر بعد ایران نے اس کا الزام اسرائیل پر عائدکیا تھا۔

بدھ کو اس رپورٹ کے سامنے آنے کے بعد اسرائیلی حکومت کے ترجمان نے کہا کہ وہ اس طرح کے معاملات پر تبصرہ نہیں کرتے۔

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here