سال 2020 : وہ عالمی شخصیات جو اب ہم میں نہیں رہیں

سال 2020 میں دنیا کے مختلف ممالک کی نمایاں شخصیات ہم سے بچھڑ گئیں، رواں سال جدا ہونے والے افراد کی فہرست میں کئی نامور فن کار بھی شامل تھے۔

دو جنوری کو لبنان کے معروف ٹی وی چینل سے وابستہ سینئر اینکر اور نیوز کاسٹر نجوا قاسم 52 سال کی عمر میں انتقال کرگئیں۔ نجوا قسیم دبئی میں واقع اپنے گھر میں موجود تھیں کہ اس دوران انہیں ہارٹ اٹیک ہوا جو جان لیوا ثابت ہوا۔

10جنوری کو سلطنت عمان کے سلطان قابوس بن سعید 80 سال کی عمر میں پانچ عشروں تک اقتدار پر فائز رہنے کے بعد ہمیشہ کے لیے جدا ہوگئے۔ ان کے انتقال پر ملک میں تین روزہ سوگ کا اعلان کیا گیا۔

مصر کے سابق صدر حسنی مبارک 25 فروری کو 91 سال کی عمر میں انتقال کرگئے، کرپشن کے الزامات کی زد میں رہنے والے حسنی مبارک فالج کے باعث اسپتال میں زیرعلاج تھے، وہ مسلسل تین دہائیوں تک مصر کے صدر رہے۔

لندن: کرکٹ کے کھیل میں ڈک ورتھ لوئس قانون کے بانی ٹونی لوئس 3 اپریل کو 78 برس کی عمر میں دارِ فانی سے کوچ
کرگئے۔ ڈک ورتھ لوئس (ڈی ایل) میتھڈ کے بانی نے 1992 میں قانون متعارف کرایا جو آج بھی نافذ العمل ہے۔

بھارت کے لیجنڈ کرکٹر والٹر ڈیسوزا 11 اپریل کو جہان فانی سے کوچ کرگئے، ان کی عمر 93 سال تھی، وہ رات کو سوئے
اور اسی حالت میں دنیا کو الوداع کہہ گئے۔ ڈیسوزا سب سے عمر دراز فرسٹ کلاس کرکٹر تھے۔

برطانوی ریسنگ لیجنڈ سر اسٹرلنگ ماس طویل علالت کے بعد 12 اپریل کو انتقال کرگئے ہیں، دنیا کی سب سے بڑی کار ریس
فارمولا ون کے مایہ ناز ڈرائیور سر اسٹرلنگ ماس کی عمر 90 سال تھی۔

بچوں کے بے حد پسندیدہ کارٹون ٹام اینڈ جیری اور پوپائے دی سیلر مین کے ہدایت کار آسکر ایواڈ یافتہ جین ڈچ 20 اپریل کو
انتقال کرگئے ان کی عمر 95 برس تھی۔

بھارتی فلم انڈسٹری کے مشہور اداکار عرفان خان 29 اپریل کو ممبئی میں انتقال کرگئے۔ عرفان خان بڑی آنت کے انفیکشن کے
باعث ممبئی کےاسپتال میں زیر علاج تھے۔ ان کی عمر 53 برس تھی۔

امریکی ریاست کیلی فورنیا سے تعلق رکھنے والے رگبی کے معروف کھلاڑی میکس تیورک 22 جون کو اچانک انتقال کرگئے،
ایک پارک میں چل قدمی کرتے ہوئے اچانک موت کے منہ میں چلے گئے، موت سے متعلق تاحال کوئی حتمی رائے سامنے نہیں
آئی ہے۔

بھارتی فلم انڈسٹری کی اس معروف کوریو گرافر سروج خان 3 جولائی کو ممبئی کے ایک اسپتال میں ہمیشہ کے لیے اس دنیا سے
رخصت ہوگئیں۔ ان کا اصل نام نرملا پال تھا۔ انہوں نے 70 سال کی عمر پائی۔

ہالی ووڈ کے مقبول ترین اطالوی میوزک کمپوزر آسکر ایوارڈ یافتہ ایننیو مورریکو 8 جولائی کو انتقال کرگئے، ان کی عمر 91
برس تھی۔ اطالوی میوزک کمپوزر سال 1928 میں اٹلی کے شہر روم میں پیدا ہوئے۔

متحدہ عرب امارات کی ریاست شارجہ کے نائب سربراہ شیخ احمد بن سلطان القاسمی 10 جولائی کو انتقال کرگئے۔ شارجہ کی
حکومت نے نائب سربراہ کے انتقال پر تین روزہ سوگ کا اعلان کیا اس دوران قومی پرچم بھی سرنگوں رہا۔

امریکی ریاست پنسلوانیا کے شہر فلاڈیلفیا میں مقیم باکسنگ کے لیجنڈری کوچ ناظم رچرڈ سن 25 جولائی کو اچانک انتقال کرگئے۔

اردو کے معروف شاعر راحت اندوری 11 اگست کو اس دنیا کو الودع کہہ گئے، انہوں نے کورونا پازیٹو ہونے کی اطلاع خود
اپنے ٹوئٹر پیغام کے ذریعہ دی تھی۔ ڈاکٹر راحت اندوری کی عمر 70 برس تھی۔

سابق آسٹریلوی کرکٹر اور کراچی کنگز کے ہیڈ کوچ ڈین جونز 24 ستمبر کو انتقال کرگئے، سابق ٹیسٹ کرکٹر کا انتقال ممبئی کے ایک اسپتال میں دل کا دورہ پڑنے سے ہوا۔ ڈین جونز کی عمر 59 سال تھی، وہ 24 مارچ 1961 میں میلبرن میں پیدا ہوئے۔

قائد اعظم محمد علی جناح کی تعريف کرنے پر بی جے پی سے نکال ديے جانے والے رہنما جسونت سنگھ 27 ستمبر کوانتقال کر گئے، انہیں بانی پاکستان پر کتاب لکھنے کی وجہ سے بھارت اور پاکستان دونوں ہی ملکوں ميں جانا جاتا ہے۔ سابق بھارتی سياست دان جسونت سنگھ کی عمر 82 برس تھی۔

امیر کویت شیخ صباح الاحمد الجابر الصباح طویل علالت کے باعث 29 ستمبر کو جہان فانی سے کوچ کرگئے۔ وہ امریکہ کے ایک اسپتال میں زیر علاج تھے ان کی عمر 91 برس تھی۔

نیوزی لینڈ سے تعلق رکھنے والے لیجنڈری کرکٹر جان رچرڈ ریڈ 14 اکتوبر کو انتقال کرگئے ان کی عمر 92 برس تھی۔
انٹرنیشنل کرکٹ کاؤنسل (آئی سی سی) کی جانب سے ان کے انتقال پر تعزیت کا اظہار کیا گیا۔

سعودی شہزادہ نواب بن سعد بن مسعود بن عبدالعزیز 20 اکتوبر کو رضائے الہٰی سے انتقال کرگئے۔

روضہ رسول اور حجرہ مبارک کی کئی دہائیوں تک خدمت کرنے والے بزرگ آغا احمد علی یاسین 2 نومبر کو انتقال کرگئے
آغا احمد یاسین کے انتقال کے بعد اب مدینہ منورہ میں صرف تین آغا حیات ہیں، یہ وہ لوگ ہیں جنہوں نے اپنی زندگی مسجد
نبوی شریف کی خدمت کے لیے وقف کر رکھی ہے۔

اعصابی بیماریوں میں مبتلا ہونے والے بھارتی اداکار فراز خان 4 نومبر کو انتقال کرگئے، وہ علاج کے غرض سے اسپتال میں
داخل تھے، انہوں نے اپنی زندگی کے آخری ایام کسمپرسی میں گزارے۔

فلسطین کی حکومت کے اہم عہدیدار صائب عریقات کرونا وائرس میں مبتلا ہوکر 10 نومبر کوجہان فانی سے کوچ کرگئے۔
صائب عریقات الفتح پارٹی کے رکن اور دو دہائیوں سے فلسطین کے چیف مذاکرات کار رہے تھے۔ ان کی عمر 65 سال تھی۔

بحرین کے وزیراعظم شہزادہ خلیفہ بن سلمان الخلیفہ11 نومبر کو انتقال کر گئے، ان کی عمر84 سال تھی، شہزادہ خلیفہ
بن سلمان الخلیفہ49 برس تک وزارت عظمیٰ کے عہدے پر فائز رہے
۔

سوڈان کے سابق وزیر اعظم صادق المہدی کورونا کے باعث 26 نومبر کو انتقال کر گئے وہ گزشتہ تین ہفتے سے متحدہ عرب امارات کے ایک اسپتال میں زیر علاج تھے۔ ان کی عمر 84 سال تھی۔

شہزادہ متعب بن عبداللہ بن سعود بن عبدالعزیز آل سعود کی والدہ سعودی شہزادی مداوی بنت عبداللہ 25 دسمبر کو انتقال کر گئیں

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here