کوئٹہ سرینا

کوئٹہ سرینا

صوبہ بلوچستان کے دارالحکومت کوئٹہ کے سرینا چوک پرہونے والے دھماکے کے نتیجے میں دو پولیس اہلکار شہید اور  آٹھارہ  افراد زخمی ہوگئے ہیں۔

امن دشمن عناصر نے ایک بار پھر بزدلانہ وار کرتے ہوئے کوئٹہ میں خون کی ہولی کی ناکام کوشش کی ہے، ایک بار پھر وطن عزیز کے محافظوں نے اپنی جانوں کا نذرانہ دیکر مادر وطن کو بڑی تباہی سے بچالیا ہے۔

پولیس ذرائع کے مطابق سرینا چوک کے قریب دھماکے میں پولیس وین کو نشانہ بنایا گیا ہے، بزدلانہ حملے میں دو پولیس اہلکار شہید جبکہ اٹھارہ افراد زخمی ہوئے ہیں۔

پولیس کے مطابق دھماکا اتنا زور دار تھا کہ قریبی عمارتوں کے شیشے ٹوٹ گئے، دھماکے کے فوری بعد سکیورٹی فورسز نے علاقے کو گھیرے میں لیتے ہوئے سرچ آپریشن کا آغاز کردیا ہے، متاثرہ علاقے کی مکمل ناکہ بندی کردی گئی ہے جبکہ شہید پولیس اہلکار اور زخمیوں کو سول اسپتال منتقل کردیا گیا ہے۔

ترجمان بلوچستان حکومت لیاقت شاہوانی نے دھماکے کی تصدیق کرتے ہوئے بتایا کہ سریناچوک پر پولیس وین کےقریب دھماکا ہوا، :دھماکےمیں دو پولیس اہلکارشہید جبکہ اٹھارہ  افراد زخمی ہیں،زخمیوں میں بارہ پولیس اہلکار جبکہ چھ شہری شامل ہیں  دھماکا خیزمواد موٹرسائیکل میں نصب کیا گیا تھا

لیاقت شاہوانی نے دھماکے کی مذمت کرتے ہوئے کہا کہ دہشت گرد بلوچستان کا امن خراب کرنا چاہتے ہیں، پرامن بلوچستان کی حالات خراب کرنےوالوں کوکیفرکردارتک پہنچائیں گے۔

وزیراعلیٰ بلوچستان کی مذمت

وزیراعلیٰ بلوچستان جام کمال نے سریناہوٹل کےقریب دھماکےکی مذمت کرتے ہوئے دو پولیس اہلکاروں کی شہادت پرافسوس کا اظہار کیا ہے، وزیراعلیٰ بلوچستان نے کہا کہ دہشت گردعناصرصوبے کا امن تباہ کرنا چاہتےہیں،دہشت گردوں کومذموم مقاصدمیں کبھی کامیاب نہیں ہونےدیں گے،دہشتگردی کی عفریت کےخاتمےکیلئےعوام اپنےفورسزکےساتھ ہے۔

وزیراعلیٰ بلوچستان نےمتعلقہ حکام سےواقعےکی رپورٹ طلب کرتے ہوئے زخمیوں کوعلاج کی بہترین طبی سہولیات فراہم کرنے کی ہدایت کی ہے۔

دھماکا ٹائم ڈیوائس تھا، ڈی آئی جی پولیس

ڈی آئی جی پولیس اظہراکرام نے جائے حادثے کا دورہ کیا اور میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے بتایا کہ ابتدائی تحقیقات کےمطابق دھماکاٹائم ڈیوائس تھا،پولیس اہلکارڈیوٹی پرتھےان کے قریب موٹرسائیکل میں نصب دھماکاہوا،دھماکےکی تحقیقات کاآغازکردیاہے، زخمیوں میں تین افرادکی حالت تشویشناک ہے۔ڈی آئی جی پولیس اظہراکرام نے جائے حادثے کا دورہ کیا اور میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے بتایا کہ ابتدائی تحقیقات کےمطابق دھماکاٹائم ڈیوائس تھا،پولیس اہلکارڈیوٹی پرتھےان کے قریب موٹرسائیکل میں نصب دھماکاہوا،دھماکےکی تحقیقات کاآغازکردیاہے، زخمیوں میں تین افرادکی حالت تشویشناک ہے۔

ڈی آئی جی پولیس اظہراکرام نے اعتراف کیا کہ تھریٹ تھےاورہم الرٹ تھے۔ڈی آئی جی پولیس اظہراکرام نے اعتراف کیا کہ تھریٹ تھےاورہم الرٹ تھے۔

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here