یہ وقت بہت ہی اہم ہے کہ تحافظِ ناموسِ انبیاء و صحابہ پر عالمی قانون سازی کروانے کی طرف حکومتِ وقت اور وزیزِ خارجہ سمیت متعلقہ حکام کی توجہ دلاوائی جائے

0
287

یہ وقت بہت ہی اہم ہے کہ تحافظِ ناموسِ انبیاء و صحابہ پر عالمی قانون سازی کروانے کی طرف حکومتِ وقت اور وزیزِ خارجہ سمیت متعلقہ حکام کی توجہ دلاوائی جائے۔

کیوں کہ ہمارا ایک حکومتی وفد یو این او گیا ہوا ہے جس میں 29 ستمبر کو جناب وزیرِ خارجہ شاہ محمود قریشی صاحب خطاب فرمائیں گے۔

انکے اس خطاب سے قبل حکومت کی اس مسئلے پر توجہ دلانا بہت ضروری ہے اس کے علاوہ جناب وزیراعظم عمران خان صاحب بھی ماضی قریب میں اس حوالے سے اپنے ایک خطاب میں بات کر چکے ہیں کہ

گستاخانہ خاکوں اور اس قسم کی گستاخیوں کے حوالے سے اک عالمی قانون سازی کر وائیں گے تاکہ آئندہ کوئی بھی آذادئ اظہار کے نام پر گستاخی نا کر سکے

لہٰذا اب وزیر اعظم صاحب کو بھی انکی وہ بات یاد دلانے کا وقت آن پہنچا۔

اسکے لئے ہمیں سوشل میڈیا کا استعمال کرتے ہوئے آواز اٹھانی ہے اور اس پیغام کو حکومتی اعوانوں ، میڈیا چینلز ، نیوز پیپرز  اینکرز پرسنز تک پہنچانے کے ساتھ ساتھ یو این میں گئے حکومتی وفد تک بلند کرنا ہے تاکہ وہ اپنے اس خطاب سے قبل دیگر اہم امرور کے ساتھ اس پر بھی اپنا لائحہ عمل تیار کرلیں۔

اول تو وقت بہت ہی قلیل ہے دوسرا ہماری سوشل میڈیا ایکٹیوٹس اس معاملے کو سنجیدگی سے نہیں دیکھ رہے کیوں کہ ہم سب دیگر ایشوز پر تو بات کر رہے ہیں مگر یہ اہم مسئلہ مسلسل نظر اندازی کا شکار ہو رہا ہے جبکہ یہ ہر مسلمان کے ایمانی عقائد کے تحافظ کا مسئلہ ہے۔

کچھ دنوں سے اس حوالے سے ٹرینڈ تو ہو رہا ہے مگر کچھ وجوہات کی وجہ سے پینل پر جگہ نا‌ بنا پایا اور نا ہی سوشل میڈیا کی سب ٹیمز اس پر تاحال ایک نقطے پر ہیں۔

خدارا اس اہم مسئلے پر ایک ہو کر محدود سے وقت سے فائدہ اٹھا لیں اور اس سعادت سے محروم نا رہیں۔

دراصل یہ سب آزمائشیں ہیں وہ رب کریم کسی چیز کا محتاج نہیں وہ چاہے تو سب گستاخوں کو لمحے بھر میں ہی غرق کر دے۔

وہ سب پر قدرت رکھتا ہے مگر ہمیں آزماتا بھی ہے ہم نے اپنی آزمائش میں سرخرو ہونا ہے تاکہ اپنی آخرت بہتر کر سکیں۔

یہ سعادت اس رب نے اگر ہمارے ہی نصیب میں لکھ دی ہے تو کیوں منہ پھیرے بیٹھے ہو ؟؟؟

سوچو ہم اگر سوشل میڈیا کے ذریعے آواز اٹھانے پر قدرت ہونے کے باوجود آج ناموسِ رسالت و صحابہ کا عالمی قانون بنوانے میں اپنا کردار ادا نا کریں تو قبر و محشر میں آقا ﷺ کو کیا منہ دکھائیں گے ؟؟؟

اگر آپ کا ضمیر کوئی مثبت جواب دے تو اللہ عزوجل کا نام لے کر ابھی سے اس پر کام کا آغاز کردیں کیا پتہ یہ سانس اگلے لمحے جسم میں رہے یا نا رہے۔

اس حوالے سے فیس بک پر بھی تحریری کمپین کا آغاز اپنے اپنے الفاظ میں ابھی سے کر دیں اور اس ہیش ٹیگ کے ساتھ ٹویٹر ٹرینڈ پر اپنے پڑھنے والوں کو اپنے ساتھ شامل کریں۔

#UNLaw4MuhammadPBUH

اس تحریر کو کاپی کر کے اپنی اپنی وال سے شئیر بھی کرلیں۔

تحریر: محمد شاہد عنائیت

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here