یہ حملہ انہی دہشت گردوں کا رہا کرانے کے لیے کیا گیا تھا

0
502

سکھر میں حساس اداروں کے جس سٹیشن پر حملہ ہوا انہوں نے کچھ دن پہلے کچھ نہائت اہم دہشت گردوں کو گرفتار کیا تھا ۔۔۔۔!!

یہ حملہ انہی دہشت گردوں کا رہا کرانے کے لیے کیا گیا تھا ۔۔۔۔۔!!

حملے کے لیے ایسے وقت کا انتخاب کیا گیا جب وہاں موجود سیکورٹی اور سٹیشن کا عملہ افطار اور نماز میں مصروف تھا۔۔۔۔۔۔۔!!!

حملے کے پہلے حصے میں سٹیشن کے قریب دھاکہ کیا گیا جس کی شدت اس قدر زیادہ تھی کہ عمارت کا 40 فیصد حصہ فوری طور پر تباہ ہوگیا ۔۔۔۔ اور سکھر کے رہائشیوں کے مطابق دھماکے کے مرکز سے پانچ کلومیٹر دور انہیں ایسا محسوس ہوا جیسے انکے گھر کی چھت ان پر گر گئی ہو اور وہ سن ہو کر رہ گئے تھے ۔۔۔۔۔۔!!

اس دھماکے کے نتیجے میں عمارت کے اندر موجود اہلکاروں کی جو حالت ہوئی ہوگی اس کا اندازہ کیا جا سکتا ہے ۔۔۔۔۔!!

لیکن آفرین ہے ان پر کہ وہ اس کے بعد بھی سنبھل گئے اور فوری طور پر عمارت میں گھسنے والے چار دہشت گردوں کا نہایت جوانمردی سے مقابلہ کرنے لگے جن میں ایک خودکش حملہ آور بھی شامل تھے ۔۔۔ اس مقابلے میں وہ ان چاروں کو ہلاک کرنے میں کامیاب ہوگئے ۔!!!

دہشت گردوں کا پانچواں ساتھی بھی خود کش حملہ آور تھا جس کو زندہ گرفتار کرنے کا فیصلہ کیا گیا اور اسکے گرد جب گھیرا ڈالا گیا تو اسنے خود کو دھماکے سے اڑا دیا جسکے نتیجے میں میجر ذیشان اور اسکا ایک اور ساتھی اہلکار جام شہادت نوش کر گئے ۔۔!!!

مجموعی طور پر ایک پولیس اہلکار ، ایک مالی جو پہلے دھماکے میں شہید ہوا تھا اور دو آئی ایس آئی کے اہلکار شہید ہوئے اور پانچ دہشت گرد ہلاک ہوئے ۔۔۔۔۔!!

جس مقصد کے لیے حملہ کیا گیا تھا یعنی اپنے ساتھیوں کو چھڑانا ان میں انہیں مکمل طور پر ناکامی ہوئی ۔۔۔۔۔۔!!

اللہ ہمارے ان جوانوں کی قربانی قبول فرمائے اور اس جنگ میں اللہ ہمیں فتح نصیب فرمائے ۔۔۔!!

تحریر شاہد خان

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here