گمان غالب ہے کہ نواز شریف بھی اپنی پیشن گوئی درست ثابت کرنے کی تگ و دو کر رہا ہے۔

0
370

نواز شریف لندن میں،
اسکی فتنہ پرور بیٹی لندن میں،
احسن اقبال لندن میں،
سجن جندال لندن میں،
نریندر مودی لندن میں،
حسین حقانی لندن میں،
الطاف حسین پہلے سے وہاں موجود،
اور پی ٹی ایم کے لیے متحرک خصوصی افغان ایلچی لندن میں،

ہے نا دلچسپ اتفاق؟

ایک اور دلچسپ اتفاق یہ ہے کہ آج ہی پسکین تحریک والے خوشی سے دھمال ڈالتے ہوئے اعلان کر رہے ہیں کہ مریم نواز نے ان کے لاہور میں فوج مخالف جلسے کے لیے تیس ہزار کارکن فراہم کرنے کا اعلان کر دیا ہے۔

اعلان سے یاد آیا کہ چند دن پہلے نواز شریف نے بھی ایک اعلان کیا تھا کہ ” میں آنے والے دنوں میں پاکستان میں انتشار دیکھ رہا ہوں ” ۔۔

نواز شریف کے اس اعلان پر میرے ایک پیارے دوست نے تبصرہ کیا ہے کہ ۔۔

“کسی گاؤں میں ایک لڑکی نے نے بھی ایسی ہی پیشن گوئی کی تھی کہ کل اس گھر کا ایک فرد کم ہوجائیگا، اور اگلے دن بھاگ گئی، تو گھر والوں نے کہا کہ بھاگی ضرور لیکن اللہ کی ولی تھی، پیشن گوئی بلکل درست ثابت ہوئی اسکی!”

گمان غالب ہے کہ نواز شریف بھی اپنی پیشن گوئی درست ثابت کرنے کی تگ و دو کر رہا ہے۔

قوم پرستی کے نام پر پنجابی اور پشتون کو ٹکرانے کا پلان غالباً تبدیل کر دیا گیا ہے۔ پشتونوں کی طرف سے بے پناہ مزاحمت اور آئینی گرفت میں آنے کے خوف سے۔

اب غالباً افغانیوں اور پٹواریوں کو ایک پلیٹ فارم پر پشتون پنجابی اتحاد کا نام دے کر پاک فوج کے خلاف پراپگینڈے اور نفرت پھیلانے کے لیے استعمال کیا جائیگا!

جمہوریت سے کبھی کسی خیر کی امید نہیں رہی۔ لوگوں کے افراد بکتے ہیں ہمارے لیڈر بک جاتے ہیں۔ باچاخان مردود سے یہ سلسلہ شروع ہوا اور ابولکلام آزاد سے ہوتا ہوا بھٹو اور شیخ مجیب تک اور وہاں سے نواز شریف تک آن پہنچا!

جب تک اس “تگ و دو” کے اثرات تم لوگوں کے گھروں تک نہ پہنچ جائیں تب تک تم لوگ حقوق اور عصیب کے جھنڈے جمع ہونے والے اس فتنے کو جائز قرار دینے کے جواز ڈھونڈو!

پہلے کی طرح ۔۔۔۔۔۔۔۔

تحریر شاہدخان

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here