کشمیر میں بھارت جو کر رہا ہے کیا اس سے کشمیر میں امن آ رہا ہے یا پڑھا لکھا جوان بھی کتابیں چھوڑ کر کلاشنکوف اٹھا رہا ہے

0
254

عبدالمنان وانی زندگی سے بھرپور ایک ہنستا کھیلتا جوان تھا. علی گڑھ مسلم یونیورسٹی کا یہ پی ایچ ڈی سکالر جس کے چہرے پر ایک دل آویز مسکراہٹ رہا کرتی تھی اپنے رویے میں اتنی نرمی رکھتا تھا کہ ساتھی مثالیں دیا کرتے تھے

پھر پتہ ہے کیا ہوا ؟؟؟

وہ چہرا جو اپنی مسکراہٹ کی وجہ سے مشہور تھا اس پہ اب چٹانوں جیسی سنجیدگی تھی. برہان الدین وانی کی شہادت کے بعد بھارتی فوج نے کشمیر میں ظلم و بربریت کے وہ پہاڑ توڑے کہ نوجوان عبدالمنان وانی مسکرانا ہی چھوڑ گیا. جن ہاتھوں کا واسطہ قلم و قرطاس سے پڑتا تھا ان میں اب اے کے فورٹی سیون تھی اور مسکرانے والی آنکھوں سے بس اب انتقام کا لہو ٹپکتا تھا

فروری دوہزار اٹھارہ میں یہ نوجوان *حزب*المجاہدین* میں شامل ہو چکا تھا اور وہاں دلی میں بھارتی مکاروں کی صفوں بے کہرام تھا. ایک برہان وانی کی شہادت سنبھالنا ان کےلیے عذابِ جان بن چکا تھا اور اب یہ دوسرا وانی ان کی آنکھوں میں آنکھیں گاڑے کفن اور کلاشنکوف لہرا رہا تھا. عبدالمنان وانی تھوڑا لڑا پر اچھا لڑا. کل اس عبدالمنان وانی کو شہید کر دیا بھارتی فوج نے
عبدالمنان وانی کی شہادت اپنے پیچھے کئی سوال چھوڑ گئی ہے

کشمیر میں بھارت جو کر رہا ہے کیا اس سے کشمیر میں امن آ رہا ہے یا پڑھا لکھا جوان بھی کتابیں چھوڑ کر کلاشنکوف اٹھا رہا ہے؟؟؟

یہ بھارت جو ہر دفعہ سرحد پار کی دراندازی کہہ کر بات بدل جاتا ہے یہ آخر کسے دھوکہ دے رہا ہے ؟؟؟

ابھی زیادہ عرصہ تو نہیں ہوا جب فریدین کھانڈے نام کا ایک مقامی فدائی جوان بھارتی فوجی کیمپ کو نیست و نابود کر چکا تھا. یہ داخلی مزاحمت کا گہرا رنگ بھارت کو خون میں نہلا دے گا بھارت یاد رکھے. اور کوئی الزام یا بہانہ بھارت کو نہیں بچا سکے گا. برہان وانی کشمیریوں کا ہیرو تھا جس کے پوسٹر لوگ سعادت سمجھ کے لیتے ہیں. اب عبدالمنان وانی ہے، جس کی مسکراہٹ چھینی پہلے بھارت نے، پھر کتابیں اور آج زندگی بھی چھین لی. وہ مسکراتا نوجوان اب کشمیر کی خاک میں سو رہا ہے. اس خاک میں ایک آتش فشاں ابل رہا ہے جو جلد یا بدیر بھارت کی بنیادیں ہلا دے گا

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here