پی ٹی ایم کو سپورٹ کرنے والا کچرا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔

0
305

پی ٹی ایم کو سپورٹ کرنے والا کچرا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔

4 اپریل 2014ء کو چترال کے وکلاء نے سول جج رحمت اللہ محسود کے خلاف شاہی قلعہ روڈ پر ایک احتجاجی مظاہرہ کیا۔

ان کا الزام تھا کہ جج صاحب نے ایک ںوجوان خاتون، اس کی والدہ اور کمسن بیٹے کو پچھلے ایک ماہ سے اپنے ساتھ ایک ہوٹل میں ٹہرا رکھا ہے اور جج ان کے ساتھ غیر اخلاقی حرکات میں ملوث ہیں۔

اس احتجاج کے بعد مذکورہ ہوٹل نے جج صاحب کے ہوٹل میں داخلے پر پابندی لگا دی۔

وکلاء اور چترال کمیونٹی لیڈرز کا دعوی تھا کہ جج موصوف انتہائی بدکردار ہیں اور اس کے ساتھ ملوث خاتون کو اسی جج نے ایک ماہ پہلے اپنے ایک فیصلے کے ذریعے طلاق دلوائی تھی۔

جس کے بعد پشاور ھائی کورٹ نے معاملے کی تحقیقات کیں اور جج موصوف کا چترال سے ٹرانسفر کرادیا اور اس کو غیر معینہ مدت کے لیے او ایس ڈی بنا دیا۔ یاد رہے کہ او ایس ڈی ان آفیسرز کو بنایا جاتا ہے جن کی بے عزتی کرنا مقصود ہو۔

جج صاحب کی دوسری وجہ شہرت دہشت گردی میں پکڑے جانے والوں کو خصوصی رعائتیں دینا اور ان کی فوری رہائی کے احکامات جاری کرنا تھا۔ جس کے بعد بلاآخر اس کو اپنی نوکری سے ہاتھ دھونا پڑے۔

اس وقت یہ پی ٹی ایم کے سرکردہ کارکنان میں سے ایک ہیں اور اسرائیلی آرمی زندہ باد کے نعرے لگا رہے ہیں۔

تصویر میں انکی شکل اور اس پر موجود خباثت بخوبی ملاحظہ کی جا سکتی ہے۔

دنیا جہان کا کچرا اور غلاظت سمٹ کر پی ٹی ایم میں جمع ہورہا ہے۔

تحریر شاہدخان

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here