پی ٹی ایم کا سب سے زیادہ خطرناک سانپ

0
240

پی ٹی ایم کا سب سے زیادہ خطرناک سانپ !!!۔

چیک پوسٹ حملے میں گرفتار محسن داوڑ کے ایک قیربی ساتھی نے اعتراف کیا ہے کہ حملے کے وقت “محسن داوڑ” خود بھی مسلح تھا اور اسکے ساتھی بھی۔ فوجیوں سے چپقلش شروع ہوتے ہی ساتھیوں نے چیک پوسٹ پر سیدھی گولیاں چلائیں جس کے جواب میں فوج نے بھی گولیاں چلائیں۔

یاد رہے اس حملے میں 2 فوجی جوان شہید جبکہ 3 حملہ آور جوابی فائرنگ میں مارے گئے۔

اب جو کہہ رہے تھے کہ پی ٹی ایم والے غیر مسلح تھے انہیں تو اپنا منہ ہمیشہ کے لیے بند کردینا چاہیے۔ جسٹ شٹ اپ

قارئیں !۔

لازمی بات ہے کہ “محسن داوڑ” اور “علی وزیر” نے باقائدہ پلان کے تحت پشتونوں کو مسلح کرکے چیک پوسٹ پہنچایا، پھر چقلش شروع کروائی جو ان کا منصوبہ تھا پھر جیسے ہی فائرنگ شروع ہوگئی تو دونوں بھاگنے لگے، علی وزیر کو تو فوج نے موقع پر ہی پکڑ لیا لیکن اصل غدار “محسن داوڑ” سب کو لڑاکر خود بھاگ گیا۔

اس پوری کاروائی کے دوران محسن داوڑ کے ساتھی خفیہ کیمروں سے ریکارڈنگ بھی کرتے رہے، ریکارڈنگ کس کو دکھانے کے لیے کر رہے تھے؟ لازمی ان کو جو انہیں اس شرط پر فنڈز دیتے ہیں کہ تم نے پشتونوں کو فوج سے لڑوانا ہے۔

اس ساری صورتحال پر اگر غور کیا جائے تو بظاہر ایسا لگ رہا ہے کہ “محسن داوڑ” نے پشتونوں کے ساتھ ساتھ “علی وزیر” کو بھی استعمال کیا ہے۔ عین ممکن ہے سی ٹی ڈی کے ہاتھوں 8 روزہ چھترول کے بعد “علی وزیر” خود بھی “محسن داوڑ” کے خلاف سلطانہ گواہ بن جائے۔

ایک اور اہم بات ۔ ۔ ۔

“محسن داوڑ” کے امریکی سی آئی اے کے ساتھ بہت گہرے تعلقات ہیں، میموگیٹ اسکینڈل کا خالق غدار “حسین حقانی” بھی لنڈن و نیویارک میں اس سے کئی ملاقاتیں کرچکا ہے، بھینسے غینڈے وغیرہ سب اسکے ساتھ ہیں اور وہیں سے ہی انڈین راء سے بھی اس نے ملاقاتیں کی۔ فنڈز اکھٹے کیے پھر پاکستان آکر پشتونوں کو افواج کے خلاف اکسانا بلکہ لڑانا شروع کردیا۔

دراصل “منظور پشتین” شروع سے ہی پی ٹی ایم کے پکیٹ فارم سے شرپسندی کروانے یا پشتونوں کو فوج سے لڑوانے میں ناکام رہا تھا اسی لیے یہود و نصاری اور ہندو مشرکوں نے پلان ( بی ) کے تحت “محسن داوڑ” کو آگے کیا، محسن داوڑ نے پھر “علی وزیر” کو آگے کردیا اور یوں “پشتون تحفظ موومنٹ” میں منظور پشتین برائے نام رہ گیا جبکہ اصل کردار “محسن داوڑ” اور علی وزیر بن گئے۔ اس وقت پی ٹی ایم کی ڈرائیونگ سیٹ محسن داوڑ ہی سنبھال رہا ہے جس نے بلاول زرداری اور مریم صفدر کو بھی اپنے سحر میں مبتلا کر رکھا ہے۔

اسکے علاوہ پشتون عورتوں کو ریاست و افواج پاکستان کے خلاف کرنے کے لیے دشمن نے “گلالئی اسمعیل” اور “ثناء اعجاز” جیسی لبرل بیغیرت اور یورپ و امریکی ماحول کی کی عاشق عورتوں کو لانچ کیا۔

اب پاکستانی عوام جان چکی ہے کہ “پشتون تحفظ موومنٹ” کے نام پر احتجاج کرنے والوں کے مقاصد وہ نہیں ہیں جو یہ بیان کرتے ہیں۔ غدار ٹولا اب مکمل بےنقاب ہوچکا ہے الحمداللہ۔ بہت جلد یہ سب جیل میں ہوں گے اور خود اصل پشتون ہی ان کا صفایا کریں گے۔ ان شاءاللہ

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here