مولانا فضل الرحمن کے حق میں پیش کیے گئے کچھ ٹھوس دلائل ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ! 

” پہلے اپنی شکل دیکھو پھر بات کرو۔۔۔۔۔۔۔۔ “

” تمھاری اوقات کیا ہے؟۔۔۔۔۔۔”

” تم تو شکل سے ہی کوئی قادیانی لگ رہے ہو۔۔۔۔۔۔۔”

” تو مجھے ولد لحرام لگتا ہے۔۔۔۔۔۔”

” کسی لعنتی کی اولاد۔۔۔۔۔”

” دھرنے کی پیدوار کیا جانے مولانا کی بصیرت۔۔۔۔۔۔۔۔”

” مولانا سے جلنے والے برنال لگائیں۔۔۔۔۔ “

” چل فٹ اور بھونک مولانا صاحب پر۔۔۔۔۔۔ “

” تمھاری جرات کیسے ہوئی مولانا کے خلاف بکواس کرنے کی۔۔۔۔۔۔”

اور سب سے ٹھوس اور فیصلہ کن دلیل ۔۔۔۔۔۔ “مولانا فضل الرحمن کو سمجھنے کے لیے ماں کا نیک ہونا اور باپ کا ایک ہونا ضروری ہے۔۔۔۔۔۔۔ “

بھلا بتائیے۔ ان دلائل کے بعد بندہ قائل نہ ہو تو کیا کرے؟؟

نوٹ ۔۔۔۔۔ ان میں سے کچھ دلائل کو آپ میری ٹائم لائن پر ہی مل جائنگے۔ اور کچھ دلائل یہاں نقل کرنے کی ہمت نہیں ہوئی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

سنا ہے حضورﷺ نے فرائض سے بھی پہلے اخلاقیات سکھائے تھے۔ آپﷺ سے ملکر پہلا تاثر محبت، نرمی، شفقت اور خیر خواہی کا ملتا تھا۔

لیکن خود کو زبردستی رسول اللہ ﷺ کے وارثین قرار دینے والے ان نام نہاد علماء سے ملکر پہلا تاثر نفرت، سختی، بے مروتی اور غیض و غضب کا ملتا ہے۔

یہ لوگ نہ صرف اپنی بداخلاقی، گالم گلوچ اور بدزبانی کے لیے مشہور ہیں۔ بلکہ اس پر خوش ہوکر ایک دوسرے کو داد بھی دیتے ہیں۔۔۔۔۔۔۔۔ 

لاجواب ہونے پر لوگوں کی خواتین کو نشانہ بنانا انکا معمول ہے۔۔۔۔۔۔۔۔

واللہ ۔۔۔۔۔۔ علماء کا یہ طبقہ جہلاء کی بدترین قسم ہے۔

تحریر شاہدخان

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here