قرآن کے مطابق حضرت سلیمان کا ہیکل ( محل ) جنات نے تعمیر کیا اور یقیناً وہ ایک غیر معمولی تعمیر تھی۔

0
472

کچھ جنات کے بارے میں ۔۔۔۔۔۔۔

قرآن کے مطابق حضرت سلیمان کا ہیکل ( محل ) جنات نے تعمیر کیا اور یقیناً وہ ایک غیر معمولی تعمیر تھی۔

میرا ہمیشہ سے یہ گمان رہا ہے کہ اہرام اور دنیا بھر میں پائی جانے والی اس جیسی مافوق الفطرت تعمیرات کسی غیر انسانی مخلوق کا کارنامہ ہے شائد جنوں کا۔

میں پہلے بھی عرض کر چکا ہوں کہ علاقہ غیر میں مجھے نوادرات کا ایک سمگلر ملا تھا جس نے مجھے انگلی کی طرح لمبے پتھر دکھائے تھے جن میں شفاف ٹیڑھے سوراخ تھے۔ بقول اس کے یہ سلیمان (ع) کی دور کی کرنسی ہے اور ان پتھروں میں یہ ٹیڑھے سوراخ جنات نے کیے ہیں۔ بقول اس کے ان کی نقل بنانا آج بھی ناممکن ہے۔

مجھے کچھ عرصہ پہلے ایک ایسا بوڑھا ملا جس کے بارے میں مشہور ہے کہ وہ جنات سے کلام کرتا ہے۔

میرے سامنے اس نے کسی نظر نہ آنے والے بوڑھے جن سے بات چیت کی جو مجھے سنائی نہیں دی لیکن وہ باباجی بتاتا رہا۔ ایک بات اس نے نہایت دلچسپ بتائی۔
بقول اس بابا جی کے کہ یہ بوڑھا جن کہتا ہے کہ میں ان مزدوروں میں سے ایک تھا جنہوں نے اہرام بنائے اور یہ کہ یہ اہرام فرعونوں نے نہیں بنائےتھے۔

دو باتیں نوٹ کرنے والی ہیں۔ پہلی کہ بابا جی قطعاً انپڑھ ہیں شائد اہرام مصر کا نام بھی نہیں سنا ہو اور دوسری کہ میں نے اس حوالے سے کوئی سوال نہیں کیا تھا۔

—————–

قرآن کے مطابق زمین میں ایسے بھی لوگ ہیں جن پر شیاطین اترتے ہیں۔

سپاہ صحابہ کے ایک بہت بڑے امیر جنات کو قابو کرنے کے حوالے سے مشہور ہیں۔ ان کے پاس آنے والے ایک جن کا دعوی ہے کہ وہ ان دو شریر جنات سے واقف ہے جو مزرا غلام احمد قادیانی کے پاس جاتے تھے کہ ہم اللہ کی طرف سے بھیجے گئے فرشتے ہیں۔ ۔۔۔ 🙂

——————–

ہمارا عقیدہ ہے کہ رمضان میں اللہ شیاطین کو باندھ لیتا ہے۔ مجھے نہیں علم کہ یہ قرآن سے ثابت ہے یا کوئی حدیث ہے۔ لیکن آگے کی بات سنیں۔

جادو اور سحر وغیرہ میں جنات کا کردار غیرمعمولی ہے۔

انڈیا غالباً جادو ٹونے کرنے والا دنیا کا سب سے بڑا ملک ہے۔ یہ بات کافی مشہور ہے کہ ہندو پاکستان انڈیا کے اہم کرکٹ میچز میں جادو کرتے ہیں خاص طور پر ورلڈ کپ میچز میں اور جادو میں شیاطین ( شریر جنات ) سے ہی کام لیا جاتا ہے۔ اسی وجہ سے پاکستان ہمیشہ ہارتا ہے۔

لیکن اس بار آئی سی سی کا اہم ترین میچ رمضان میں آیا۔ شیاطین کے باندھے جانے کی وجہ سے وہ جادو کرنے سے معذور رہے۔ دوسری طرف رمضان میں کی جانے والی بے شمار دعائیں۔

وہ میچ آج بھی دیکھیں تو یوں معلوم ہوتا ہے کہ کسی غیر مرئی طاقت نے پاکستان کو میچ زبردستی جتوایا ہو۔ 🙂

————————–

اور آخری بات۔ اسلام آباد جی سیون میں جامعہ حٖفظہ کے قریب پیپل کا ایک ایسا درخت ہے جس کے چاروں طرف کم از کم 10 سے 15 گز تک موبائل سگنلز گڑ بڑ کرنےلگتے ہیں اور آواز کٹتی ہے۔ یہ قطعاً میرا ذاتی تجربہ و مشاہدہ ہے اور کبھی کسی سے شیر نہیں کیا تھا۔
مجھے شک ہے کہ اس درخت میں کچھ ہے۔ 🙂

تحریر شاہدخان

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here