شہداء کے مقدس لہو کو کسی بھی صورت میں فراموش نہیں کیا جائے گا:سید علی گیلانی

0
513

شہداء کے مقدس لہو کو کسی بھی صورت میں فراموش نہیں کیا جائے گا:سید علی گیلانی

حریت چیرمین سید علی گیلانی نے معرکہ پلوامہ میں شہید ہوئے عسکریت پسند شبیر احمد ڈار کو شاندار الفاظ میں خراج عقیدت ادا کرتے ہوئے کہا کہ ہماری قوم کے غیور نوجوان اپنی اُٹھتی جوانیوں اور گرم گرم لہو سے تحریکِ حقِ خودارادیت کو پروان چڑھا رہے ہیں۔ سانبورہ پانپورہ میں شبیر احمد ڈارکے جلوس جنازہ سے اپنے ٹیلیفونک خطاب میں حریت راہنما نے بھارت کے جبری قبضے سے آزادی حاصل کئے جانے کے عہد کا اعادہ کرتے ہوئے کہا کہ شہداء کے مقدس لہو کو کسی بھی صورت میں فراموش نہیں کیا جائے گااور ہم ان کے چھوڑے ہوئے مشن کو اپنے منطقی انجام تک پہنچا کر ہی دم لیں گے۔ حریت راہنما نے اس امر پر تعجب کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ سب سے بڑا المیہ یہ ہے کہ بھارت اپنے نشۂ قوت میں چور ہوکر زمینی حقائق کو تسلیم کرنے سے بڑی ڈھٹائی کے ساتھ انکار کررہا ہے اور ہماری حقِ خودارادیت کی تحریک کے خلاف ظلم، جبر اور بربریت پر انحصار کرتا آیا ہے۔ حریت راہنما نے عوام بالخصوص نوجوان نسل کی قربانیوں کو خراج تحسین ادا کرتے ہوئے کہا کہ ہمارے لوگ تحریک آزادی کے ساتھ والہانہ عقیدت رکھتے ہیں اور ان کے جذبۂ آزادی کو دنیا کی کوئی طاقت دبانے کی متحمل نہیں ہوسکتی۔ حریت چیرمین نے آزادی پسند عوام بالخصوص نوجوانوں سے دردمندانہ اپیل کرتے ہوئے کہا کہ وہ اللہ تعالیٰ کی ذات پر بھروسہ کریں وہ ضرور ہماری مدد کرکے ہمیں بھارت کے جبری فوجی قبضے سے آزادی نصیب فرمائے گا مگر شرط یہ ہے کہ ہم اللہ تعالیٰ کی مدد حاصل کرنے کے لیے اپنے آپ کو اس کا مستحق بنائیں اور ہر سطح اور ہر موقعہ پر نظم وضبط کا مظاہرہ کرکے اپنی مقدس تحریک کے خلاف ہورہی گھناؤنی سازشوں کا ڈٹ کر مقابلہ کریں اور دشمن کی چالوں سے خبردار رہتے ہوئے تحریک آزادی کو انتشار کی نذر کرنے کی تمام مذموم سازشوں کو ناکام ونامراد بنائیں۔علاوہ ازیں سملر بانڈی پورہ میں فوج کے ساتھ ایک جھڑپ میں پانچ مجاہدین شہید ہوئےجن کو پولیس نے غیر ملکی جتاکر شیری بارہ مولہ میں سپرد خاک کیا ۔ پلوامہ سے آئے ایک وفد نے حریت چیرمین جناب سید علی گیلانی صاحب کے ساتھ ملاقات کے دوران اس بات کا خلاصہ کیا کہ مذکورہ شہداء میں تین نوجوان عبدالرشید لون، فاروق احمد بجران اور بلال احمد ڈار بالترتیب کنگن پلوامہ، پہلی پورہ کیلر شوپیان اور برازلو شوپیان سے تعلق رکھتے ہیں اور ان کا مطالبہ ہے کہ ان شہداء کی نعشوں کو ان کے لواحقین کے حوالے کیا جائے ۔ وفد نے مزید کہا کہ اس حوالے سے ان کا ڈی این اے ٹیسٹ بھی کیا گیا مگر بدقسمتی یہ ہے کہ ان نعشوں کو واپس کرنے میں لیت لعل سے کام لیا جارہا ہے۔ لواحقین کی طرف سے اُن کے لخت جگروں کی نعشوں کو اپنے آبائی قبرستان میں سپرد خاک کئے جانے کے مطالبے کو ان کا ایک جائز مذہبی اور قانونی حق قرار دیتے ہوئے گیلانی نے کہا کہ بھارتی قابض افواج کے ہاتھوں کشمیری نوجوان نسل کو چُن چُن کر جنگلوں اور بیابانوں میں لے جاکر سپرد خاک کرنا ایک تشویشناک صورتحال کا عکاس ہے۔ حریت راہنما نے اسے انسانی حقوق کی سنگین خلاف ورزی قرار دیتے ہوئے اقومِ متحدہ کے انسانی حقوق کمیشن کو ریاست جموں کشمیر میں بھارت کی قابض انتظامیہ کے ہاتھوں بین الاقوامی سطح پر وضع کردہ قوانین کی سریحاً خلاف ورزی کا سنجیدہ نوٹس لینے کی اپیل کی۔

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here