سورہ کوثر کی مثل بنانا کیوں ناممکن ؟

0
1418

سورہ کوثر کی مثل بنانا کیوں ناممکن ؟

عرب اہل زبان تھے۔ قرآن کا اسلوب ان کے لیے بلکل اچھوتا اور حیران کن تھا خاص کر ایک امی شخص کی زبانی۔ سورہ کوثر بھی اسی منفرد اسلوب میں ہے۔ 

یہ سورہ بھی باقی قرآن کی طرح خود نہیں لکھی گئی بلکہ لکھوائی گئی ہے تاکہ شک نہ رہے کہ کہیں سے کچھ نقل کیا گیا ہے۔ 

قرآن شاعرانہ کلام نہیں لیکن باقی قرآن کی طرح اس تین آیات والی سورہ میں بھی حیران کن انداز میں الفاظ کی روانی اور آیات کے ہم ردیف ہونے کی وجہ سے کسی عظیم الشان شاعرانہ کلام سے کئی گنا زیادہ چاشنی ہے۔ کوثر، ونحر ، ابتر پر غور فرمائیے۔

ردیف اور ہم وزن الفاظ کے باؤجود معنویت کے لحاظ سے بہترین الفاظ کا چناؤ حیران کن ہے۔ صرف ایک لفظ کوثر میں بیک وقت کثرت اولاد، کثرت مال، کثرت امت اور حوض کوثر کی خوشخبری سنائی گئی ہے۔

صوتی اثرات کی بات کی جائے تو عربی سے نابلد شخص بھی کچھ الفاظ کا وہی اثر لیتا ہے جو انکا مفہوم ہوتا ہے۔ مثلاً “کوثر” کا محسوس ہوتا ہے کہ کچھ اچھا اور “ابتر” کسی خرابی یا برائی کی نشادہی کرتا محسوس ہوتا ہے۔

بقیہ قرآن کی طرح اس سورہ کے بھی مخصوص صوتی اثرات ہیں۔ آیات نہ صرف سننے میں اچھی لگتی ہیں بلکہ فورا یاد بھی ہو جاتی ہیں۔

لیکن ان سب کے باؤجود انتہائی سادہ اور عام فہم استدلال جس کو ہر شخص فوراً سمجھ لے۔

یہ گانا یا شاعری نہیں لیکن اس کو باربار دہرانے سے انسان بور نہیں ہوتا۔

ان تین جملوں میں بیک حضورﷺ کو تسلی اور خوشخبری، دشمن کے لیے تنبیہ اور دو پیشن گوئیاں موجود ہیں جو دونوں پوری ہوئیں۔ حضورﷺ کو کثرت اولاد، کثرت امت اور امت کو مال کثیر نصیب ہوا جبکہ ولید بن مغیرہ باؤجود صاحب مال و صاحب اولاد ہونے کے دونوں سے محروم مرا۔

یاد رکھئے یہ ادبی تخلیق نہیں بلکہ کفار کے دئیے گئے طعنے کا اچانک نازل ہونے والا جواب تھا بقیہ قرآن کی طرح۔ نہ اس کے لیے ہزاروں صفحے لکھ لکھ کر پھاڑے گئے نہ ہفتوں مہینوں غور وخوض کیا گیا۔

لیکن اس کے باؤجود یہ سب کچھ ۔۔ جتنا ہم نے سمجھا صرف اسی کو مد نظر رکھ کر سوچئے کیا واقعی اسکی کوئی مثل بنائی جا سکتی ہے؟؟؟

“اگر تم لوگوں کو اس میں شک ہے جو ہم نے اپنے بندے پر نازل کیا تو اس جیسی ایک سورہ بنا کر لے آؤ” ۔۔۔۔

واللہ قرآن کا یہ چیلنج قرآن کی مختصر ترین سورہ کے لیے بھی پورا کرنا محال ہے۔

تحریر شاہدخان

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here