دل اور دماغ ۔۔۔۔۔۔ ایک میان میں دو تلواریں۔

0
420

دل اور دماغ ۔۔۔۔۔۔ ایک میان میں دو تلواریں۔۔۔۔۔۔۔
ایک ہی مملکت کے دو خود سر بادشاہ۔۔۔۔۔۔۔
ایک مستی اور خمار سے بھرپور۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دوسرا وسوسوں کی آماجگاہ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ایک ہر دم جوان۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دوسرا پیدائشی بوڑھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ایک ہر لمحہ زندگی ۔۔۔۔۔۔
دوسرا پل پل موت۔۔۔۔۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ایک غموں کے آسمان تلے۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دوسرا ذرے ذرے میں خوشی کا متلاشی۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ایک کے لیے ہر سو تاریکی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دوسرا اس جہان کے رنگوں میں مست۔۔۔۔۔۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ایک کے لیے رات کا چاند خوابوں اور امید کا جھولا۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دوسرے کے لیے دن کا سورج ناامیدی کی اندھی کھائی۔۔۔۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ایک پر گلاب کے رنگ اور خوشبو کا خمار۔۔۔۔۔۔۔
دوسرا کانٹوں سے زخمی۔۔۔۔۔۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

آہ انکی کشمکش مجھے دیوانہ کیے دے رہی ہے ۔۔۔۔۔۔ 🙁

تحریر شاہد خان

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here