فلسطین میں ویسے تو سارے پاکستان کو ہی بہت پسند کیا جاتا ہے پر بلخصوص حماس کے حامی لوگ پاکستان کو بہت زیادہ پسند کرتے ہیں کیسے پاکستانیوں کو پسند کرتے ہیں اور کیوں .

حماس کا عسکری ونگ القسام کی پاکستانی اداروں سے بہت قربت رہی ہے اور اب بھی ہے جو کچھ نام نہاد جہادیو ( فسادیوں) کو پسند نہیں آتی اسلئے وہ حماس کی مدد نہیں کرتے نہ ہی اسرائیل کے خلاف ” جہاد” ضروری سمجھتے ہیں، حماس کو کسی عرب ملک کی حمایت حاصل نہیں ہے بلکہ جب فلسطینی عوام نے انہیں منتخب کیا تو اسرائیل نے اپنے سدھائے ہوئے نام نہاد مسلمان لیڈرز کے ذریعے ان کی حکومت گرائی اور محمود عباس کو حماس کی جگہ لا کر بٹھا دیا گیا اسکے بعد جب داعش نامی فتنہ شام سے ابھرا تو بجائے اسرائیل کی طرف آنے کے جو کہ شام کی سرحد کے ساتھ ہی ہے ، انھوں نے عراق کا رخ کیا اور وہاں فرقہ وارانہ فسادات کروائے اور اب تک آگ بہت پھیل چکی ہے جب کہ انکے بیچارے حمایتی جو ابھی تک یہ نہیں سمجھ پا رہے کہ ہم امیر المومنین ملا عمر کو کہیں یا البغدادی کو ایک عجیب سا عذر پیش کر رہے ہیں کہ عراق اور اسرائیل کے راستے میں جارڈن آتا ہے اسلیے فلحال اسرائیل نہیں جارہے ..

ارے جناب فیس بک سے نکل کر بھی کچھ علم حاصل کیا ہوتا تو شاید جیوگرافی کی تھوڑی سمجھ ہوتی کہ کون سے ملک کی سرحد کس سے لگ رہی ہے. اور شام سے اسرائیل آسان ہوتا یا عراق . اسکے علاوہ جو یہ بھونڈی دلیل دے رہے ہیں کہ القسام کو داعش نے ٹرین کیا ہے تو انکے لئے عرض ہے جب داعش کا نام نہاد خود ساختہ امیر ابھی ایک ٹچا ایجنٹ بھی نہیں بنا تھا القسام تب سے لڑ رہی ہے اور اصل لڑائی غزہ میں ہے جہاں داعش کی موجودگی تو دور کی بات وہاں لوگ ان کا نام لینا پسند نہیں کرتے اور جن ناموں سے انہیں پکارتے ہیں وہ لکھ دوں تو سب سنسر ہوجاۓ 🙂

باقی اگر آپکا کوئی فلسطین میں رہتا ہے تو ان سے معلوم کرلیں یا مقامی میڈیا سے رابطہ کرلیں لگ پتہ جانا ہے کہ القسام کو ان خود ساختہ امیروں سے کتنی محبت ہے . یہ بات پتہ ہونی چاہیئے کہ پاک آرمی نے جب روس کو توڑا تھا تو اپنا کوئی فوجی افغان سرحد میں لڑنے کے لئے نہیں بھیجا تھا بلکہ ہماری فوج کا ایک انداز رہا ہے کہ جب دشمن سمجھتا ہے کہ وہ جنگ جیت چکا ہے یہ اصل جنگ لڑنا ہی تب شروع کرتے ہیں اور یقین کیجئے جب پاک آرمی لڑنا شروع کرتی ہے تو چیخیں افغان دفتر خارجہ سے لے کر امریکی وائٹ ہاؤس تک نکلتی ہیں.

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here