جمہوریت کا حسن؟

0
1291
جمہوریت کا حسن؟

آپ اکثر جمہوریت پسندوں سے” جمہوریت کا حسن ” جملہ سنتے رہتے ہیں آئیے ذرا اس حسن کی ایک جھلک دیکتھے ہیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
سن انیس سو اکتہر کے انتخابات کے بعد “ادھر تم ادھر ہم” کا نعرہ جمہوریت کے سب سے بڑے چیمپئن بھٹو نے لگایا اور پاکستان دو ٹکڑے ہوگیا یہ جمہوریت کا پہلا تحفہ تھا۔۔۔۔۔
یہ بھی جمہوریت کا حسن تھا کہ بھٹو سول مارشل لاء ایڈمنسٹریٹر بن گیا۔۔۔۔۔
سوشلزم کا داعی بھٹو جمہوریت کا وارث بن گیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ایک سو تیرہ علماء کے فتووں کے باوجود ہے کہ سوشلزم کفر ہے دو جمہوری علماء مفتی محمود اور غلام غوث نے جمہوریت کے بازار میں فتوی دیا کہ اسلامی سوشلزم جائز ہے استغفراللہ یہ بھی جمہوریت کا حسن تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
سوشلزم کے داعی نے جمہوریت کا لبادہ اوڑھ کر صنعتیں اور بینک نشنلائز کر دئیے کاٹن اور رائس ملز قومیا لیں جن نے پیدوار اور برآمدات کا بیڑہ غرق کر دیا، سرمایہ کار ملک سے بھاگ گئے،صنعتوں کی جگہ کشکول تیار کیا گیا، شکار کے نام پر عربوں کو پہلی بار زمینیں دے کر ان سے چندہ لیا گیا ، یہ بھی جمہوریت ہی کا حسن تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ملک میں پہلی بار بڑے پیمانے پر سیاسی بھرتیاں کر کے ملکی اداروں کو تباہ کیا گیا
(اس پارٹی نے سیاسی بھرتیوں کا وہ سلسلہ اب تک جاری رکھا ہے) اور جی ٹی ایس کی ڈبل ڈیکر بس کی جگہ قوم کو منی بس کا تحفہ دیا گیا ۔۔۔ جمہوریت کا حسن۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

اپنی جمہوری حکومت کو بادشاہی کا رنگ دینے کے لیے فوج پر کنٹرول ضروری تھا اسلئےایک جونیر جرنیل کو چیف آف آرمی سٹاف بنایا گیا اور اس جرنیل پر اللہ رحم فرمائے اس نے سب سے پہلا کام یہی کیا کہ اس جمہوری لیڈر کو بذریعہ تختہ دار اللہ کے سپرد کر دیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

اب اگلا جمہوری دور شروع ہوتا ہے بھٹو دوبارہ زندہ ہوگیا اور اب کے سیاسی جماعتیں خاندانی وراثت بن گئیں جمہوریت کا حسن دوبارہ چمکنے لگا۔۔۔۔۔۔۔۔
الیکشن پیسے کا کھیل بن گیا ، تو تو میں میں نے گریبان چاک کر دئیے اور اجلے سفید کپڑوں سے گندے بدبودار اور غلیظ جسم برآمد ہوئے مال مسروقہ موجود لیکن کوئی جرم ماننے پر تیار نہ ہوا۔ اقبال کے بقول جمہوریت کے دیو کا پاؤں مار کر رقص کر رہا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

ذاتی مفادات کو قومی مفادات کا نام دیا گیا، ووٹ برادری ، لسانی ، مذہبی ، علاقائی یا ذاتی مفاد کے لیے مختص کیے گئے جمہوریت کا حسن۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ڈکٹیٹر ایوب خان کے سستی بجلی والے پن بجلی کے منصوبوں کے مقابلے میں جمہوریت پسندوں نے مہنگی بجلی والے آئی پی پیز متعارف کروائیں جمہوریت کا حسن
سستی بجلی کے پن بجلی منصوبے سیاسی اختلافات کی نظر ہو گئے قومیائے گئے ادارے تباہی کے بعد کوڑویوں کے مول نیلام کیے گئے اور فرائض سے پہلو تہی کو جمہوریت قرار دیا گیا جمہوریت کا حسن نظروں کو خیرہ کر رہا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

دو تہائی اکثریت پا لینے کی خوشی میں کوئی تعمیری کام کرنے کے بجائے فوج سے مکا بازی کی گئی خوشحال وزیراعظم نے اپنے دانا مشیروں کے مشوروں سے دوبارہ ایک جونیر جرنیل کو چیف آف آرمی سٹاف مقرر کیا تاکہ بادشاہی کی راہ ہموار ہو یہ جمہوریت کا حسن ہی تو تھا لیکن اس جرنیل نے موقع ملتے ہی جمہوریت کو پھر زیر کر لیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دو تہائی اکثریت والا اٹک کے قلعے میں منتظر رہا پھر جان کی امان پا کر
بین لاقوامی گٹھ جوڑ سے بمع خاندان باہر تشریف لے گیا تاکہ کچھ عرصے بعد دوبارہ پاکستان پر جمہوری حملہ کر سکے جمہوریت کا حسن۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ڈالر کی قیمت سن سینتالیس سے اکتہر تک ساڑھے چار روپے رہی اور جمہوریت نے اپنا حسین چہرہ دکھایا تو یہ یک دم گیارہ روپے پر چلی گئ پھر جب اسکو ایک دو اور جمہوری جھٹکے لگے تو اس نے سنچری مار لی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

این آر او ہر طرف سے ملعون ہو کر بلاآخر جمہوریت پسند عدالت کے پاس پہنچا جس نےفوری طور پر اس کو کالا قانون قرار دے کر معطل کر دیا۔ لیکن جمہوریت کو بچانے کے لیے”نظریہ خوف” کے تحت اس این آر او کے تحت صدر بننے والے زرداری کے اتنخاب کو درست قرار دیا۔
اور تو اور جمہوریت پسند عدالت بلکل خالص جمہوری حکومت کی جمہوری حسن کے چکا چوند میں اتنی اندھی ہوئی کہ مال مسروقہ کی برآمدگی کے لیے پانچ سال میں جمہوری حکومت سے ایک خط نہ لکھوا سکی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

خالص جمہوری اتحاد والی حکومت پانچ سال میں سستی بجلی کا کوئی منصوبہ نہ بنا سکی بلکہ مہنگی ترین بجلی رینٹل پاور کا سکینڈل بنا اور یہ جمہوریت کاحسن نہیں تو اور کیا ہے کہ اس سکینڈل میں ملوث شخص جمہوری وزیراعظم بن گیا اور رینٹل وزیراعظم کہلایا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

سن تہتر کے آئین کو انیس بار مرمت کرنے کے باوجود قابل عمل نہیں بنایا جا سکا اور قومی اسمبلی میں ستر سیٹوں کا اضافہ کیا گیا لیکن ملک میں ایک کارخانے کااضافہ نہ کیا جا سکا البتہ ریکارڈ تعداد میں کارخانے بند ضرور ہوئے جمہوریت کا حسن ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

سچائی اور ایمانداری ثابت کرنی ممکن نہ رہی تو آئینی ترمیم کے ذریعے جھوٹے اور بے ایمان شخص کی حکمرانی کے لیے گنجائش پیدا کی جا رہی ہے۔۔۔۔

اس کا حسن لوگوں کو اندھا کر چکا ہے ۔۔۔۔۔۔۔ !

تحریر شاہدخان

 

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here