nato air defence in

جدید جوہری روسی ہتھیار، جنہیں ’دشمن تباہ نہیں کر سکتا‘
روسی صدر ولادیمیر پوٹن نے دعوی کیا ہے کہ روس نے ایسے جدید جوہری ہتھیار تیار کیے ہیں جنہیں کسی بھی دشمن ملک کی جانب سے راستے میں تباہ نہیں کیا جا سکتا۔ ان ہتھیاروں میں نئے میزائل اور لیزر ہتھیار بھی شامل ہیں۔  روسی صدر نے یہ بات گزشتہ روز عوام سے ٹیلی ویژن پر اپنے خطاب میں کہی تھی۔ ولادیمیر پوٹن کے مطابق جدید روسی ہتھیار عسکری ٹیکنالوجی کی ترقی میں بہت بڑا انقلاب ہے۔ انہوں نے یہ دعوی بھی کیا کہ یہ نئے میزائل امریکی قیادت میں نیٹو کے دفاعی میزائل کے نظام کو بے کار کر دیں گے۔

روسی صدر نے جن نئے جدید ہتھیاروں کی بات کی، اُن پر ایک نظر ۔

سمارٹ بین البراعظمی بیلسٹک میزائل:

روس کئی سالوں سے جدید بین البراعظمی میزائل یا ’آئی سی بی ایم‘ بنانے کے لیے کام کرتا رہا ہے۔

یہ نیا میزائل سابقہ سوویت دور کے مشہور زمانہ میزائل کی جگہ متعارف کرایا جا رہا ہے۔ سابقہ سوویت یونین کے دور میں جنگوں میں استعمال کیا جانے والا میزائل مغربی ممالک میں ’شیطان‘ کے نام سے مشہور تھا اور یہ دس جوہری ہتھیار ساتھ لے جا سکتا تھا۔

russian Sarmat

پوٹن کے مطابق ’سرمت‘ نامی یہ نیا میزائل 200 میٹرک ٹن وزن کا حامل ہے اور اس کی استعداد ’شیطان‘ سے کہیں زیادہ ہے۔ علاوہ ازیں یہ قطبِ شمالی اور جنوبی عبور کر سکتا ہے۔ پوٹن کا کہنا تھا کہ نیا میزائل اتنی سرعت سے اپنے نشانے کی جانب بڑھتا ہے کہ دشمن کے لیے اسے تباہ کرنا نا ممکن ہے۔ تقریر کے دوران ہی ’سرمت‘ کی تجرباتی لانچ کی ایک ویڈیو بھی دکھائی گئی۔

جوہری طاقت کا حامل گلوبل رینج کروز میزائل:

russian nuclear powered

روس کے نئے جدید جوہری ہتھیاروں میں ایٹمی قوت کا حامل گلوبل رینج کروز میزائل بھی شامل ہے۔ اس میزائل کی خاص بات اس کو چلانے والا جوہری انجن ہے جو اس ہتھیار کو عملی طور پر ’لا محدود‘ قوت فرہا کرتا ہے۔ نئے کروز میزائل کی خفیہ طور پر کارروائی کرنے کی اضافی صلاحیت کی وجہ سے دشمن اس کا آسانی سے پتہ نہیں لگا سکتا۔

بین البراعظمی زیر آب ڈرون:

russian under water drone

روسی ذرائع ابلاغ نے کئی برس پہلے زیر سمندر کام کرنے والے ایک جوہری ڈرون کی خبر دی تھی۔ اس ڈرون کو ’اسٹیٹس سِکس‘ کا نام دیا گیا تھا۔ اب اس ڈرون کو سرکاری طور پر جدید ہتھیاروں کی فہرست میں شامل کر دیا گیا ہے۔ اس جوہری ڈرون کا ری ایکٹر دوسری جوہری آبدوزوں کے مقابلے میں ایک سو گنا کم ہے اور اسے انتہائی تیز رفتاری کے ساتھ لانچ کیا جا سکتا ہے۔

کنزہل ہائپر سونک میزائل:

Russian Hyper sonic

امریکا اور روس دونوں ہی ایک عرصے سے ہائپر سونک میزائل تیار کرنے کے لیے کام کرتے رہے ہیں جو آواز کی رفتار سے پانچ گنا زیادہ تیز سفر کر سکے۔ کنزہل نامی نیا جدید روسی میزائل جہاز کے ذریعے ٹارگٹ کی طرف فائر کیا جا سکتا ہے اور یہ آواز کی رفتار سے دس گنا تیز سفر کی صلاحیت رکھتا ہے۔

ایون گارڈ ہائپر سونک وہیکل:

russian

روسی صدر پوٹن کی جانب سے جن نئے جوہری ہتھیاروں کے ناموں کا اعلان کیا گیا، اُن میں میزائل نظاموں سے بچنے کے لیے تیز حرکی صلاحیت رکھنے والا ہتھیار ’ایون گارڈ‘ بھی شامل ہے۔ ایون گارڈ کو ایسے مختلف نئے مرکبات سے ڈیزائن کیا گیا ہے جو 2000 ڈگری سینٹی گریڈ تک کے ٹمپریچر کو برداشت کر سکتے ہیں۔

لیزر ہتھیار:

russian secret laser

روس اور امریکا دونوں ہی ایک عرصے سے لیزر ہتھیار بنانے اور ان میں نت نئی جدت لانے میں مصروف ہیں۔ پوٹن کے بقول روس نے ایسے جدید لیزر ہتھیاروں کی تیاری میں اہم نتائج حاصل کیے ہیں۔

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here