بڑے مشکل حالات دیکھے اس شہر کے لوگوں نے

0
218

روشنی
جیت ہمیشہ امن کی اور حق کی ہوتی ہے وہ بھی اس صورت کے حق والے حق پر ڈٹے رہیں، منزل پت نظریں جمائے جدوجہد کرتے چلے جائیں تو مالک کرم فرما دیتا ہے اور اپنے بندوں کو اندھیروں میں روشنیاں دکھا دیتا ہے.

بڑے مشکل حالات دیکھے اس شہر کے لوگوں نے، نہ صرف اس شہر بلکہ اس ملک کے لوگوں نے بھی بڑے کٹھن دن گزارے ہیں. ہر طرف دھماکے، ٹارگٹ کلنگ، خون، بارود اور دہشت کی فضا بن چکی تھی مگر اس پاک دھرتی کے متوالوں نے اپنے قدم ڈگمگانے نہیں دیے کہ جانتے تھے کہ یہ قانون فطرت ہے کہ جو آزمائش میں لڑکھڑا جائے وہ کبھی کھڑا نہیں ہوسکتا پستیاں اور ذلتیں اس کا مقدر بن جاتی ہیں. اس کے مقابل جو آزمائشوں اور مشکلات میں ڈٹا رہے آسانیاں اس کا مقدر ہوتی ہیں یہی وجہ ہے کہ بڑے مشکل اور کٹھن دنوں کے بعد یہ خوشی والے دن دیکھنے کو ملے ہیں

پوری قوم خوشی سے جھوم اٹھی ہے. خوشیاں منانا اس قوم کا حق بنتا بھی ہے مگر یاد رکھیں اندھیرے ابھی پوری طرح چھٹے نہیں ہیں، مشکلات کے بادلوں کا زور ٹوٹا ہے مگر وہ ابھی ٹلے نہیں ہیں ابھی کچھ مزید امتحان مقصود ہیں، کندن بننے سے قبل بھٹیوں میں مزید دہکنا مطلوب ہے.

ابھی دشمن چاروں طرف سے جال بچھائے کھڑا ہے اس وقت بھی پاکستان پر کڑا وقت ہے جس کی وجہ سے ہی بعض انتہائی مشکل اور دکھ بھرے فیصلے کیے جارہے ہیں لہذا ان حالات میں خوشیاں بھی منائیں کہ دشمن کے ارادوں کو شکست آپ کے مسکراتے چہرے ہی دے سکتے ہیں مگر اس کے ساتھ ساتھ اک قوم کا مظاہرہ بہت ضروری ہے. اک قوم بنیں ہجوم نہ بنیں کہ جو بھی آئے آپ کو جدھر دل چاہے لگا لے اور آپ سارے ہی بنا سوچے سمجھے کسی اندھے کنویں میں چھلانگے لگانا شروع کردیں.

غم کے چھٹتے ہوئے بادلوں اور رات کی ان مدھم ہوتی تاریکیوں کو صبح کی واضح روشنی اور اجالے میں بدلنا چاہتے ہیں تو ایک قوم بن کے دیکھیں، ایک قوم بن کے سوچیں، ایک قوم بن کے ردعمل دیں اور ایک پاکستانی بن کر اس وطن کو اوج ثریا تک پہنچا دیں.
سالار عبداللہ

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here