بڑا کھیل اور پاکستان کے جمہوری مسخرے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔!

0
361

بڑا کھیل اور پاکستان کے جمہوری مسخرے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔!
اسرائیل مشرق وسطی میں ایک بڑی جنگ کے لیے خود کو مکمل طور پر تیار کر چکا ہے اور شام میں اپنے پتے بڑی چالاکی سے کھیل رہا ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔!
شام کا معاملہ ہرگز ٹھنڈا نہیں ہوا ہے ۔ وہاں بشرالاسد کی حکومت ختم کر کے ایک کمزور حکومت کا قیام پہلا بڑا ٹارگٹ ہے ایک ایسی حکومت جو صہیونی مقاصد کی تکمیل کے لیے مکمل طور پر تیار ہو ۔۔۔ ۔۔۔۔ ایسی حکومت کے ذریعے چند اہم ترین مقاصد حاصل کیے جائیں گے ۔۔۔۔
پہلا بڑا مقصد روس کی ناکہ بندی ہے یاد رکھیے روس کو بشر الاسد سے صرف یہ ہمدردری ہے کہ وہ شام کی بحیرہ روم کی جانب طرطوس کی بندرگاہ کو کھونا نہیں چاہتا جس کو کھونے کی صورت میں روس بحیرہ بالٹک تک محدود ہو جائے گا جہاں امریکہ اور نیٹو اسکی ناکہ بندی کر لیں گے ۔۔۔۔۔یہاں یہ نقطہ سمجھ لیں کہ شامی حکومت کے خلاف لڑنے والے مزاحمت کار اگر روس کو اسکے اقتصادی اور دفاعی مفادات کے تحفظ کا یقین دلا دیں تو روس فوری طور پر بشرالاسد کو حکومت چھوڑنے کے لیے کہہ سکتا ہے لیکن چالاک اسرائیل اس چیز کو سمجھتا ہے اور اسکے توڑ کے لیے اس نے ترکی کو آگے کر رکھا ہے اور ان مزاحمت کاروں کو بے معنی مذاکرات میں الجھا رکھا ہے تاکہ وہ روس سے روابط قائم نہ کر سکیں ترکی مخلص ہوگا لیکن مزاحمت کاروں کا اصل کنٹرول جن کے ہاتھوں میں ہے وہ ان مذاکرات کو بھی کبھی نتیجہ خیز نہیں ہونے دینگے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔!

دوسرا بڑا مقصد شام کے دیگر نزدیکی ممالک تک اس خانہ جنگی کو پھیلا کر شام سمیت ان سب ممالک کی سرکاری افواج اور جنگجوؤں کو آپس میں لڑا کر دونوں کی طاقت کو تباہ کرنا ہے ۔۔۔۔۔تاکہ جب وہ خود پیش قدمی کرے تو اس کا مقابلہ کافی حد تک تباہ شدہ کمزور اور منتشر جنگجووں سے ہو جو اپنے اصل دشمن کے بارے میں کسی طرح یکسو نہ ہوں بلکہ انکو آپس کی خانہ جنگی میں برتری حاصل کرنے کے لیے بھی اسرائیل اور امریکہ کی مدد کی ضرورت رہے !!!

تیسرا بڑا مقصد آزاد کردستان کا نعرہ لگا کر ایک نئ خونریز تحریک کی شروعات کرنا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ یاد رکھیے جس کردستان کا نقشہ انہوں نے بنا رکھا ہے یہ چار اسلامی ممالک کو توڑ کر بنایا جائے گا جن میں شام ،ایران،عراق اور ترکی شامل ہیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔! ہمیشہ کی طرح آزاد کردستان کی اس تحریک میں صہیونی مقاصد کے حصول کے لیے وہاں کا میڈیا اہم ترین کردار ادا کرے گا جس طرح پاکستان میں میڈیا انکے مقاصد کی تکمیل کے لیے اپنا خوفناک کردار ادا کر رہا ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔!

دوسرے طرف افریقہ میں روس اور چین نے اتنی بڑی سرمایہ کاری کر رکھی ہے کہ کہ وہاں سے نکلنے کی صورت میں دونوں ممالک اقتصادی طور پر تباہ ہو سکتے ہیں ۔۔۔۔۔ افریقہ کا کنٹرول حاصل کرنے کے لیے اسرائیل امریکہ اور نیٹو کی مدد سے وہاں اپنی جارحانہ پالیسیاں آگے بڑھا رہا ہے کچھ عرصہ پہلے مالی پر انکا مشترکہ حملہ اسی سلسلے کی ایک کڑی تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔!!

یہ سب کرنے کے باوجود اسرائیل اپنے سب سے بڑے دشمن پاکستان سے ہرگز غافل نہیں ۔۔۔۔ پاکستان کے خلاف انڈیا کے ساتھ تازہ ترین مشترکہ میزائل پروگرام پر کام شروع ہو چکا ہے اور اس سلسلے میں ایک دو ناکام میزائل تجربات بھی ہو چکے ہیں ۔۔۔۔۔!!

جبکہ امریکہ افغانستان سے نکلنے کے بعد بھی یہاں فوجی یونٹس رکھنا چاہتا ہے تاکہ پاکستان کے خلاف جاری جنگ میں خلل نہ آئے اس سلسلے میں لوگوں کی خوش فہمیاں اب ختم ہو جانی چاہئیں !!

یہ سب پاکستان کے ارد گرد ہو رہا ہے اس حالت میں ایک مضبوط اور دانش مند قیادت کی پاکستان کو ضرورت تھی لیکن یہاں حال یہ ہے کہ کاروبار حکومت کو ایک مذاق بنا دیا گیا ہے ۔۔۔۔۔ !!

ایسی صورت حال جب پاکستان کے دفاع کے ضامن ادارے پاک فوج اور آئی ایس آئی چاروں طرف سے خطرات میں گھرے پاکستان کو بچانے کے لیے تن من دھن سے دیوانہ وار جدوجہد کر رہے ہیں ہمارے جمہوری سیاسی لیڈروں کو آئے دن نئے نئے سیاسی شوشے چھوڑنے سے فرصت نہیں مل رہی ۔۔۔ !!!

انڈیا پاکستان کا پانی روک کر پاکستان کو بنجر کرنے اور بوقت ضرورت سیلاب میں ڈبونے کی صلاحیت حاصل کر رہا نہیں بلکہ کرچکاہے اور انکے کان پر جوں تک نہیں رینگی ہے ۔۔۔ !!!!

انکی آئے دن کے مضحکہ خیز فیصلے اور اعلانات جنکا نہ بین الوقوامی حالات سے کوئی تعلق ہوتا ہے نہ عوام سے ۔۔۔۔۔۔ عوام کو صرف یہ ایک ہی خوشخبری سنا کر مطئمن کرتے رہتے ہیں اور وہ واحد چیز جس پر انکا اتفاق ہے کہ۔۔۔۔۔۔۔
” ہم نے جمہوریت کے تسلسل کو قائم رکھا ہوا ہے “

جمہوریت کا احسان جتانے والوں سے کوئی اللہ کا بندہ یہ پوچھے کہ
بھئ اس چھ سالہ جمہوری دور میں آپ لوگوں نے کونسا تیر مارلیا ہے؟ خدا گواہ ہے کہ اس جمہوریت کے عوام کو خون کے انسو رلایا ہے !!

ملک کے دفاعی اداروں پر تنقید ،معیشت کی تباہی ، زبردست قسم کی لوٹ مار اور ملک میں لسانیت کی بنیاد پر تقسیم ۔۔۔۔۔۔۔۔ اسکے علاوہ یہ کونسا کام کر رہے ہیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔؟؟؟؟؟؟

شائد وہ وقت جلد آئے جب عوام ان سے سوال کرے گی پاک فوج کو چاہئے کہ ان نازک ترین حالات میں قومی سلامتی کے لیے کسی بھی انتہائی اقدام سے گریز نہ کرے ۔۔۔۔۔۔۔۔ !

اللہ پاکستان کا اور ہم سب کا حامی و ناصر ہو۔۔۔۔۔۔۔ آمین۔۔۔۔۔!

تحریر ۔۔۔۔۔۔۔ شاہد خان

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here