ایک آئی ایس آئی آفیسر کا پیغام جو میں آپ کو پہنچانا اپنی ذمہ داری سمجھتا ہوں

0
819
Sharing Services
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  

ایک آئی ایس آئی آفیسر کا پیغام جو میں آپ کو پہنچانا اپنی ذمہ داری سمجھتا ہوں۔

خونی کھیل 31 اکتوبر تا 3 نومبر

مغربی طاقتیں عدالت صباء سیاست – میڈیا – مذہب اور فوج

ستمبر بلخصوص اکتوبر کے آغاز سے مغرب اس بات سے فکر مند تھا کے *٘پاکستان* آئی ایم ایف سے قرض تو چاہتا ہے مگر ہمیشہ کی طرح سخت شرائط ماننے سے انکار کر رہا ہے۔

مطلب پاکستان کے پاس ضرور کوئی نہ کوئی دوسری آپشن موجود ہے جو کے بلا شبہ چین ہے۔ چین نہ صرف پاکستان کو قرض دے گا بلکہ پاکستان میں مزید سرمایہ کاری کرے گا اور سرمایہ کاری کا مطلب چین پاکستان میں اپنا اثر و رسوخ بڑھانے کے علاوہ مشکل وقت میں پاکستان (یعنی اپنی سرمایہ کاری ) کی حفاظت بھی کر ے گا۔

یہی وجہ ہے کہ مغرب اور ہندوستان نے مل کر ایک ایسا کھیل کھیلا کہ چین مزید سرمایہ کاری نہ کرے بلکہ سی پیک کو موخر بھی کر دے اور اتنا بڑا فیصلہ تب ہی ہو سکتا ہے جب ٘پاکستان کے حالات بہت خراب ہوں۔

بس پھر وہ کھیل شروع ہوا جس کا رزلٹ 4 یا 5 نومبر کو متوقع تھا

ہوا یوں کہ عالمی دباؤ کو بہت زیادہ بڑھایا گیا کے (آسیہ مسیح) کا فیصلہ کیا جائے اور اس امر میں مختلف ان جی اوز ، یورپ ، قادیانی کمیونیٹی ، اور آئی ایم ایف تک نے زور لگایا۔

*پاکستانی عدالت* خاص کر چیف جسٹس جو کے ٘پہلے ہی بہت محنت کر رہے تھے کہ پاکستان کو کسی نہ کسی طرح اس کی بہتری کی طرف لے جایا جائے نے نوٹس لیا کہ اس میں کیا مضائقہ ہے کہ اگر اس کیس کا فیصلہ جلد ہو جآے؟

بس پھر طاغوتی طاقتوں نے کچھ گواہان کو مجبور کیا کہ وہ پیش نہ ہوں یا معاملے کو اس طریقہ سے پیش کیا کہ عدالت کو ثبوت وغیرہ کی کمی کی وجہ سے ایسا فیصلہ دینا پڑا۔

بس اب اگلا قدم دشمن کا یہ تھا کہ فوری طور پر آسیہ مسیح کو ملک سے باہر لے جایا جائے، جس میں وہ ناکام ہو گئے لیکن پھر بھی انھوں نے اپنا کام جاری رکھا۔

مذہبی جماعتیں باہر نکل آئیں اور جوش میں آکر کئی فتوے دے ڈالے۔

دوسری جانب تبلیغی جماعت کے اجتماع کے لیے لوگوں کا سمندر موجود تھا اور خانہ جنگی کے لیے تبلیغی جماعت کے ایک کارکن کو گولی مار کر جاں بحق کر دیا گیا۔

مقصد بریلوی صباء دیوبندی کو لڑوا کر حالات کو مزید خراب کرنا تھا.

ادھر وزیراعظم اور چینی حکمران کے مقصد کو خراب کرنے کی کوشش کی گئ۔

اسی اثنا میں سینکڑوں سوشل میڈیا کے جعلی اکاونٹ حالات کو مزید خراب کر رہے تھے۔

کچھ کا کام فوج صباء مذہبی جماعتوں کو لڑوانا۔۔۔
کچھ کا کام دو فرقوں کو لڑوانا اورکچھ حکومت اور عوام کو لڑوانے کا کام کروانا چاہتے تھے۔۔۔

اسی دوران مولانا سمیع الحق کا اچانک قتل ہونا، حمید گل کے بیٹے عبداللہ گل کو مارنے کی کوشش کرنا بھی دشمن کی چال کے حصے تھے اور بے شک پاکستان میں خانہ جنگی کی طرف ایک قدم بڑھایا جا چکا تھا۔

اس کے علاوہ دشمن نے مزید 3 سے 4 بڑے منصوبے بنا رکھے تھے، جن کو وقت پر انٹرسپٹ کر لیا گیا۔

اچھا اب جانئے کے اس میں فوج نے کہاں کہاں زخمی ہو کر بھی دشمن کی چال ناکام بنائی۔

آئی ایس آئی پہلے ہی آگاہ تھی کے دشمن بڑی کاروائی کر رہا ہے جو کے شام اور لیبیا کی طرز کی ہوگی۔ مقصد پاکستان کو ختم کرنا یا ناقابل تلافی نقصان پہنچا نا تھا۔

اندازے کے مطابق افغانستان، ہندوستان، امریکہ اور کچھ دیگر اسلام و پاکستان دشمنوں نے 50 ارب روپے خرچ کیے صرف ان چند دنوں میں۔

فوج نے برے القابات سنے پھر بھی صبر سے دشمن کی چال کو ناکام بنانے کی کوشش کی۔

ادھر میڈیا کو پابند کیا کہ کہیں بھی کوریج نہیں کرنی، کیونکہ یہ دشمن کی چال تھی کہ خوف و ہراس پھیلا کر اپنے عزائم حاصل کرے، جس میں خانہ جنگی کی افواہ، خوراک کی قلت ٘پیٹرول کی قلت، کاروبار تباہ یا بند، جلائو گھیرائو جیسی خبروں کا پھیلانا شامل تھا ۔ ٘

مگر پاکستان کی بہادر افواج نے بروقت آپریشن کر کے دشمن کے تقریبا پانچ بڑے منصوبے خاک میں ملا دیے، مگر بروقت سمیع الحق کو نہ بچا سکی۔

اس کے بعد حکومت کو اور دھرنا فریقین کو ہر طرح سمجھایا کے دشمن میدان میں آ گیا ہے۔ جس کی وجہ سے تصادم کو روکنے میں فوج کامیاب ہو گئ۔ الحمداللہ

ادھر چین کو مکمل طور پر یقین دھانی کروائی گئ کے پاکستان اپنے دشمن کی چال کو ناکام بنانا جانتا ہے۔

آئی ایس آئی کے ایجنٹس نہ صرف دھرنے میں موجود تھے بلکہ دیگر جماعتوں کی ریلیوں میں شریک نعرے بھی لگا رہے تھے.

مقصد صرف مختلف رہنمائوں کی جان کی حفاظت تھا۔ حالانکہ ان راہنماؤں میں سے کچھ پاک فوج کے خلاف بول رہے تھے۔

ادھر سائبر ونگ جعلی سوشل میڈیا کے اکائونٹ کا IP ایڈریس ڈھونڈ کر انھیں ہیک کر رہا تھا۔

آپ نہیں جانتے کہ پاک فوج کے خفیہ سپاہی مسلسل 5 دن نہیں سوئے، صرف اور صرف پاکستان کے لیے اسلام کے لیے، اپنی عوام کیلئے۔

ہم میں سے کچھ میدان میں ہجوم کے ساتھ ساتھ تھے اور کچھ اپنے کمپیوٹرز کے سامنے اور کچھ دنیا بھر میں پھیلے ہوئے پل پل کی خبریں متعلقہ افراد اور اداروں تک پہنچا رہے تھے۔

ایک فوجی ہونے کے ناطے بتاتا ہوں کہ ہمارے ادارے میں کوئی ایس ایس جی بنے یا خفیہ سپاہی، جب تک کہ وہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کا عشق نہیں رکھتا دل میں، وہ لڑ ہی نہیں سکتا دشمن سے

کاش کے آپ ہمیں کبھی لڑتا ہوا دیکھ سکیں۔
ہمارے اندر لڑنے کی یہ طاقت اللہ اکبر کے نعرے اور رسول پاک صلی اللہ علیہ وسلم کے عشق سے ہی آتی ہے…!

اللہ کا شکر ہے کہ اس نے اپنے حبیب صلی اللہ علیہ وسلم کی برکت سے ہمیں بڑے سانحے سے بچایا.

ان شاءاللہ آپ کی فوج آئندہ بھی اسلام، پاکستان اور اپنے عوام کی خاطر کسی بھی قربانی سے دریغ نہیں کرے گی.

پاک فوج زندە آباد اسلامی جمہوریہ پاکستان پائندہ باد 💚 🇵🇰

#ISI_Paindabaad
#InvinciblePakistan

#PakiSTANCYBERORGANIZATION
#Incredible


Sharing Services
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here