اپوزیشن چیف الیکشن کمشنر کی تقرری کا معاملہ سپریم کورٹ لے گئی

0
61

 اپوزیشن چیف الیکشن کمشنر کی تقرری کا معاملہ سپریم کورٹ لے گئی ، درخواست میں کہا گیا سپریم کورٹ ممکنہ آئینی بحران حل کرنے کیلئے مناسب فیصلہ کرے، ارکان کی تقرری کے لیے پارلیمانی کمیٹی کا اجلاس ناموں پر غور و فکر کے بعد ختم ہوگیا۔

تفصیلات کے مطابق متحدہ اپوزیشن کی جانب سے چیف الیکشن کمشنر کی تقرری کے معاملے پر سپریم کورٹ میں درخواست دائر کردی گئی ، درخواست پر11ارکان کے دستخط ہیں اور الیکشن کمیشن اور وفاقی حکومت کو فریق بنایا گیا ہے۔

درخواست میں مؤقف اختیار کیا گیا ہے کہ پارلیمانی کمیٹی میں اتفاق نہ ہونےکےبعدآرٹیکل213خاموش ہے، آرٹیکل 213کی خاموشی سے آئینی بحران پیدا ہوجائےگا، چیف الیکشن کمشنر5 دسمبر کو ریٹائر ہو جائیں گے۔

درخواست میں کہا گیا ریٹائرمنٹ کے بعد الیکشن کمیشن غیر فعال ہو جائے گا، کمیٹی میں اتفاق رائےنہ ہونےپرواحدراستہ سپریم کورٹ ہے، الیکشن کمیشن کےباقی 2ممبران بھی جنوری میں ریٹائرہوجائیں گے، سپریم کورٹ ممکنہ آئینی بحران حل کرنے کیلئے مناسب فیصلہ کرے۔

یاد رہے چیف الیکشن کمشنر کی ریٹائرمنٹ میں ایک دن باقی رہ گیا ہے ، ارکان کےناموں پرحکومت اوراپوزیشن میں اتفاق نہ ہوسکا، پارلیمانی کمیٹی میں آج بھی سندھ اور بلوچستان کی دو نشستوں پر بارہ نام زیر غور آئے، شیریں مزاری کا کہنا ہے کہ چیف الیکشن کمشنرکی سبکدوشی کےبعدتینوں ارکان کے تقرر کا فیصلہ کیاجائےگا۔

یاد رہے اپوزیشن لیڈر شہباز شریف نے چیف الیکشن کمشنرکےتقررکیلئے3نام وزیراعظم عمران خان کوبھجوائے تھے، جس میں ناصرمحمودکھوسہ،جلیل عباس جیلانی اور اخلاق احمد تارڑ کے نام شامل ہیں۔

خیال رہے چیف الیکشن کمشنرسردار رضا چھ دسمبر کو ریٹائرڈ ہوجائیں گے ، لیکشن کمشنر کی ریٹائرمنٹ کے بعد الیکشن کمیشن غیر فعال ہوجائے گا، سرداررضا نے 6 دسمبر2014 کو عہدہ سنبھالا تھا۔

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here