اپنے والدین کے حق میں اللہ پر خوب محنت کیجیے یہانتک کہ وہ انسے راضی ہوجائے

0
433

آج میرے کم از کم دو دوستوں کے والدین فوت ہوگئے !!! افسوس ہوا !!

لیکن ایک دو باتیں ضرور کہوں گا جو ہر اس شخص کے لیے ہیں جن کے والدین میں سے کوئی ایک یا دونوں فوت ہو چکے ہوں !!

پہلی بات تو یہ کہ ہمارے مذہب میں موت کا وہ تصور ہی نہیں ہے جو دنیا بھر میں پایا جاتا ہے ۔ بلکہ یہ تو محض انتقال کا ایک عمل ہے جس سے ہم سب سے گزرنا ہے اور ایک دوسرے جہان میں ایک بار پھر اکھٹے ہونا ہے !!

دوسری بات یہ کہ آپ اچھی طرح سمجھ لیں کہ اب آپ کے والدین ایک بھی نیکی نہیں کما سکتے !!! سوائے انکے کسی ایسے عمل کے جسکا ثواب موت کے بعد بھی مسلسل جاری رہتا ہے !!

لیکن ہم سب اچھی طرح جانتے ہیں کہ ہم نے یا ہمارے والدین نے ایسے کتنے اعمال کر رکھے ہیں اور وہ کتنے کافی ثابت ہو سکتے ہیں !!!

درحقیقت موت کے بعد والدین کی سب سے بڑی امید انکی اولاد ہی ہوتی ہے ۔ کوئی صدقات جاریہ یا دیگر اعمال انکی اولاد کا مقابلہ نہیں کر سکتی اگر اولاد اپنی والدین کی خدمت کرنا چاہیں تو !!

آپ کے والدین کے مرنے کے بعد بھی انکی خدمت کا موقع آپ کے ہاتھ سے نہیں گیا ہے ۔ اب آپ سے ایسا کوئی دن نہ گزرنے پائے جب آپ انکے حق میں کوئی نیک عمل کر کے انکو بخش نہ دیں !!! چاہے وہ صرف ایک دفعہ سبحان اللہ کہنا ہی کیوں نہ ہو!!

انکی زندگی میں آپ نے انکی جو خدمت کی اسکو فائدہ انکو نہیں بلکہ آپ کو ملے گا ۔ لیکن اب آپ انکی جو خدمت کر سکتے ہیں اسکا انکو دائمی فائدہ پہنچ سکتا ہے !!!

انکی مہلت ختم ہوچکی لیکن آپکی ابھی باقی ہے ۔

اپنے والدین کے حق میں اللہ پر خوب محنت کیجیے یہانتک کہ وہ انسے راضی ہوجائے !!

کوئی اولاد اپنے والدین کی اس سے بڑی خدمت نہیں کر سکتی !!

تحریر شاہدخان

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here