ان سیاست دانوں کی حب الوطنی صرف بیانات کی حد تک ہی رپتی ہے اور کبھی انکے عمل میں نظر نہیں آتی۔

انکی مصلحت کوشی، انکا سب کو ساتھ لے کر چلنے کی باتیں صرف اپنے اقتدار کو دوام دینے کے لیے ہوتی ہیں اور حقیقتاً ملکی مفاد کبھی انکے پیش نظر نہیں ہوتا۔

0
523

” ہر دور میں عوام اجتماعی اور انفرادی سطح پرزبانی دعووں کو اصل کارناموں پر ترجیح دیتے رہے ہیں”۔۔۔۔۔

سیاست دان انکی اس فطرت سے خوب واقف ہیں۔ 

ان پارلمانی اور جمہوری اکھاڑوں میں کرتب باز قسم کے لیڈر صرف ظاہری نمود نمائش اور زبانی دعووں سے ہی لوگوں کو مطمئن کرتے چلے آرہے ہیں اور بہت تھوڑے لوگ یہ سوچنے کی زحمت کرتے ہیں کہ کیا کبھی ان زبانی دعووں نے حقیقت کا روپ بھی دھارا ہے؟

ان سیاست دانوں کی حب الوطنی صرف بیانات کی حد تک ہی رپتی ہے اور کبھی انکے عمل میں نظر نہیں آتی۔

انکی مصلحت کوشی، انکا سب کو ساتھ لے کر چلنے کی باتیں صرف اپنے اقتدار کو دوام دینے کے لیے ہوتی ہیں اور حقیقتاً ملکی مفاد کبھی انکے پیش نظر نہیں ہوتا۔

۔یہی جمہوریت بعد میں ایسے اداروں کو جنم دیتی ہے جو دعوے زیادہ کرتے ہیں اور کام کم ۔۔۔۔۔۔

مجھے اس نظام سے سخت نفرت ہے ۔۔۔۔۔۔ !

تحریر شاہدخان

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here