انسانی کی فطرت میں فساد پایا جاتا ہے

0
115
Sharing Services
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  

انسانی کی فطرت میں فساد پایا جاتا ہے۔

اس فساد پر قابو پانے کے لیے جبر و تشدد کا سہارا لیا جاتا ہے جس کا نام تم لوگوں نے ” قانون ” رکھا ہوا ہے۔

قانون نافذ کرنے والے ریاستی نمائندے ( فوج اور پولیس ) کا اتنا رعب اور دبدبہ ہونا چاہئے کہ اس کو دیکھ کر لوگ خود ہی اپنی شرارت سے باز آجائیں۔

یہ رعب اور دبدبہ کسی نظریاتی احمق کی خیالی دنیا میں قائم کیے گئے اصولوں سے قائم نہیں کیا جاسکتا۔

یہ محض سختی سے ہی قائم کیا جا سکتا ہے۔ قانون نافذ کرنے والے نمائندے کا لہجہ اور بات کرنے کا انداز بارعب اور کرخت ہونا ہی بہتر ہے۔ وہ ایسا ہو کہ اس کو بندوق اور ڈنڈا استعمال ہی نہ کرنا پڑے بلکہ اگر وہ فساد پر آمادہ ایک مجمع کو پکارے تو محض اس کی آواز سن کر اور اسکی وردی دیکھ کر ہی وہ مجمع منتشر ہوجائے۔

یہ نہ ہو کہ آزادی اور لبرازم جیسے باطل نظریات کا اسیر کوئی بھی الو کا پٹھا اس کو ” تم میرے نوکر ہو ” کہہ کر پکارے اور اسکا منہ توڑنے کا اعلان کرنا شروع کر دے۔

عمران خان اور تحریک انصاف سے مطالبہ ہے کہ پاک فوج سے بدتمیزی کرنے والے حسن نیازی کو ” انصاف سٹوڈنٹ فیڈریشن ” کی سربراہی سے ہٹایا جائے یا وہ عوام سے اپنی بدتمیزی پر معافی مانگے۔

#Remove_Hassan_Niazi_from_ISF


Sharing Services
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here