اب دے دو ڈاکٹر شاہد کو پھانسی جس نے کہا تھا کہ اس کے پیچھے بین لااقوامی گینگ ہے

0
495

” جیو ” کی خبریں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔

“ان واقعات کی تفصیلات دل دہلا دینے والی ہیں جب کہ حکومتی سطح پر اس گھناؤنے کاروبار پر مجرمانہ خاموشی بھی حیران کن ہیں”

“6 سے10سال کی عمر کے سیکڑوں بچوں کو نہ صرف جنسی ہوس کا نشانہ بنایا گیا بلکہ ان کی ویڈیوز بھی بنائی گئیں جن کے ذریعے زیادتی کرنے والے 17 مردوں نے بچوں کو بلیک میل کرکے ناصرف پیسے کمائے بلکہ اور انہیں کہیں کا نا چھوڑا”

“عوام کا ردعمل دیکھ کر پنجاب حکومت نے ایک جے آئی ٹی تشکیل دی اور 17 ملزمان کو گرفتار کر لیا۔ بہت سے وعدے بھی کیے گئے لیکن ایک بھی پورا نہ ہو سکا۔ آج 17 میں سے 10 ملزمان عدالت سے ضمانت پر رہا ہوچکے ہیں۔ یہ ملزمان اب متاثرہ افراد کے گھر والوں کو دھمکیاں دے کر مقدمہ واپس لینے کے لیے دباؤ ڈال رہے ہیں”

“متاثرین کا کہنا ہےکہ پولیس اور مقامی سیاستدانوں کے دباؤ میں آ کر چند بچوں کے لواحقین نے اپنے کیس واپس لے لیے ہیں”

“2015 میں ہونے والے اس گھناؤنے جرم پر قصور میں مجموعی طور پر 35 مقدمے درج کروائے گئے جن میں سے اب تک 8 خاندان اپنے مقدمات واپس لے چکے ہیں”

“متاثرہ خاندانوں کے وکیل، لطیف احمد سرا کا کہنا ہے کہ ان میں کچھ خاندانوں نے پولیس کےدباؤ کی وجہ سے اپنی ایف آئی آر واپس لی ہیں جب کہ دیگر کو کیس واپس لینے کے لیے مسلم لیگ (ن )کے مقامی ایم پی اے ملک سعید نے اپنے ڈیرے پر بلا کر پیسے دیے”

“ہیومن رائٹس کمیشن آف پاکستان (ایچ آر سی پی) نے اپنی رپورٹ میں پولیس اور سیاستدانوں کے کردار کو مشکوک قرار دیا اور یہ بھی لکھا کہ متعلقہ پولیس افسران نے تحقیقاتی ٹیم سے ملاقات کرنے سے بھی انکار کر دیا”

تازہ ترین ۔۔۔۔۔۔۔

“ایف آئی اے نے بین الاقوامی پولیس انٹرپول کی نشاندہی پر جھنگ میں چھاپہ مار کر بچوں کی نازیبا ویڈیوز بنانے والے گروہ کے سرغنہ کو گرفتار کرلیا”

اوپر جیو اردو کی خبریں اور سب سے آخر میں ایکسپریس نیوز کی خبر۔

اب دے دو ڈاکٹر شاہد کو پھانسی جس نے کہا تھا کہ اس کے پیچھے بین لااقوامی گینگ ہے اور مسلم لیگ ن خود بھی ملوث ہے۔

تحریر شاہدخان

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here