آئی ایس آئی اس وقت کم سے کم تین بڑے اور بہت سے چھوٹے ملکوں سے تنہا لڑ رہی ہے

0
887

پتہ نہیں خردماغ یہ بات کیوں نہیں جانتے کہ سینکڑوں ہزاروں دہشت گردی کے plans اور attacks یہی خفیہ ایجنسیاں ہی ناکام کرتی ہیں، ان secret missions میں اللہ کے ان شیروں کی جان بھی جاتی ہے اور جسمانی اعضاء بھی لیکن آپ کبھی یہ نہیں سنتے کہ فلاں مشن کی تکمیل پر آئی ایس آئی کا فلاں ایجنٹ شہید ہو گیا اور اسے اتنی توپوں کی سلامی دی گئی اور فوجی اعزاز کے ساتھ سپرد خاک کیا گیا، اور فلاں اور فلاں نے شرکت کی،  آپ یہ بھی نہیں سنو گے کہ آئی ایس آئی کے شہداء کی فلاں جگہ یادگار تعمیر کی گئی،

اگر بےنظیر کی یادگار ایک بلین روپے سے تعمیر ہو سکتی ہے تو “گمنام راہوں میں مارے جانے والوں” کی یادگار پر بھی کروڑوں اربوں لگائے جا سکتے ہیں، یاد رہے بہت سے حساس اداروں کے مجاہد دوسرے ملکوں میں بھی شہید کر دیئے جاتے ہیں یہاں تک کہ گرفتار کر کے اذیت ناک موت کا نشانہ بھی بنائے جاتے ہیں لیکن انکی کوئی قابل رشک یادگار ہے نہ ہی اعزازات، نشان حیدر ہے نہ تمغہ جرآت یا شجاعت،
انہیں دنیا میں کچھ نہیں ملتا سوائے قربانی اور جنت کے-

ایسے انمول ہیروں کی قدر نہ کرنے والوں کے ساتھ جو کچھ ہو رہا ہے وہ ایک طرح سے کرموں کا پھل ہی تو ہے،
آئی ایس آئی بہت کچھ کر رہی ہے اب اس میں اس کا کیا قصور کہ آپ کو “بابا جی کا ٹھلو” بھی نہیں پتہ، آپ بس پیمپر شیمپر کے ریٹ پتہ کرو کہ کہاں سے “فیملی پیک” یا بچت پیک ملتا ہے، آپ کو دفاعی معاملات میں اپنی سڑیلی زبان یا ٹانگ اڑانے کی قطعا ضرورت نہیں،

آئی ایس آئی اس وقت کم سے کم تین بڑے اور بہت سے چھوٹے ملکوں سے تنہا لڑ رہی ہے،
اگر یہ آئی ایس آئی نہ ہو تو پاکستان کو شام، عراق، مصر، نائجیریا، لیبیا، فلسطین، لبنان، افغانستان اور یمن بننے میں دیر نہ لگے،

ان میں سے کئی ملک تو برباد ہونے سے پہلے پاکستان سے زیادہ خوشحال تھے لیکن اپنی آنکھوں سے انکا حشر دیکھ لینے کے بعد بھی اگر کوئی پوچھے کہ آئی ایس آئی کیا کر رہی ہے تو

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here